dushwari

جےپور:11؍ڈسمبر2017(فکروخبر/ذرائع) راجستھان کے راجسمند ضلع میں ٹھیکے دار افرازالاسلام کو قتل کرکے لاش کو آگ لگانے والے ملزم کی پولیس حراست میں 10دن کا اضافہ کردیا گیا ہے۔ پولیس ذرائع کے مطابق ملزم شمبھولال کی تین دن کی پولیس حراست ختم ہونے پر آج اتوار کی چھٹی ہونے کی وجہ سے اسے جج کے گھر پر پیش کیاگیا جہاں اس کی پولیس حراست کی مدت مزید 10دن بڑھادی گئی۔واضح رہے کہ ملزم نے گزشتہ چھ دسمبر کو افرازالحق کو اپنے کھیت میں لے جاکر قتل کردیا تھا

مولانا سید احمد ومیض ندوی

ہمارا ملک ایک عجائب خانہ ہے، جہاں ہر روز کوئی نہ کوئی عجوبہ ظاہر ہوتا رہتا ہے، تاج محل کو بھلے دنیا کا ساتواں عجوبہ قرار دیا جاتا ہو، لیکن ہندوستان کی سب سے زیادہ عجوبے کی چیز یہاں کا فرقہ پرست ٹولہ اور زمام اقتدار سنبھالی ہوئی حکمراں جماعت ہے، اس کی پالیسیوں اور اس کے متضاد اقدامات نے ملک کو اہل عالم کے لیے تماشہ گاہ بنادیا ہے، ملک میں ہر دن ایک نیا تماشہ دیکھنے کو ملتا ہے، سنگھ پریوار اور اس کی پشت پناہ مرکزی حکومت کے دوہرے پیمانے او ران کی منافقانہ چال کب او رکیسے پینترا بدلے گی کچھ نہیں کہاجاسکتا،

راجستھان :07؍ڈسمبر2017(فکروخبر/ذرائع)راجستھان کے راج سمندر علاقہ سے لو جہاد معاملہ کی سنسنی خیز اور دل دہلادینے والے واردات کی ایک ویڈیو منظر عام پر آئی ہے ،لو جہاد کے نام جس نوجوان کو تشدد کرکے زندہ جلادیا گیا اس شخص کا نام محمد بھٹہ بتایاجا رہا ہے ،غنڈوں نے پہلے اسے مارا پیٹا اور صرف جلایا نہیں بلکہ ظالموں نے اس کا ویڈیو تک بنالیا ،یہ واقعہ راج نگر کے راج سمند علاقہ کی دیو ہیریٹیج روڈ پر پیش آیا،پولس کو پہلے اطلاع ملی کہ ایک نوجوان کا آدھ جلا جسم ملا ہے۔

نازش ہما قاسمی

یہ ہمارے ملک ہندوستان ہی میں ممکن ہے کہ یہاں مسلم خواتین کی نام نہاد ہمدردی کے لیے وزیر اعظم تک میدان میں کود پڑتے ہیں لیکن وہیں ایک نومسلم دوشیزہ جو دل و زبان سے ایمان قبول کرچکی ہے اسے بہکانے پھسلانے اور ڈرانے کے لیے پوری ہندوتنظیمیں اور مشنریاں متحد ہوکر اسے اسلام سے برگشتہ کرنے کی کوشش کرتی ہیں۔۔۔ان فرقہ پرست تنظیموں کے نزدیک مختار عباس نقوی، شاہنواز حسین، ظہیر خان شاہ رخ خان کی شادیاں داستان محبت (لو میریج) قرار دی جاتی ہیں لیکن وہیں دوسری طرف اسلام کی حقانیت اور اس کے آفاقی پیغام سے متاثر ہوکر کوئی اکھیلا نامی بچی مذہب اسلام قبول کرکے ہادیہ بنتی ہے تو اسے لو جہاد قرار دیا جاتا ہے۔۔۔

جودھپور:08؍نومبر2017(فکروخبر/ذرائع) راجستھان ہائی کورٹ نے مبینہ لوجہاد کیس میں عارفہ عرف پایل کو اپنی مرضی کے مطابق یعنی شوہر کے ساتھ رہنے کا حکم دیا ۔ جسٹس گوپال کرشنا ویاس اور جسٹس منوج گرگ کی ڈویژن بنچ نے  یہ حکم دیا۔ اس معاملے میں سماعت جاری ہے ۔ متاثرہ لڑکی کو پہلے ناری نکیتن میں رکھا گيا تھا، جس نے  عدالت کے حکم کے بعد اپنے سسرال جانے کو پسند کیا ہے۔قابل ذکر ہے کہ عدالت نے یکم نومبر کو مذہب تبدیلی کرکے مسلم نوجوان سے نکاح کرنے والی پایل کو سات دن کے لئے ناری نیکتن بھیج دیا تھا۔

Urdu-Arabic-Keybaord11

ISLAMIC-MESSAGES