dushwari

راجستھان : عمر قتل کیس ،پولیس نے کہا : گئو رکشکوں کے ہاتھ ہونے کا اب تک کوئی ثبوت نہیں

الور۔13؍نومبر2017(فکروخبر/ذرائع)   راجستھان میں گائے لے جارہے مسلم نوجوان عمر کے قتل کے سلسلہ میں ایک نیا انکشاف ہوا ہے ۔ پولیس نے اب قتل میں گئو رکشکوں کا ہاتھ نہیں ہونےکا دعوی کیا ہے ۔ علاوہ ازیں الور پولیس نے ایف آئی آر درج کرلی ہے اور اس سلسلہ میں ایک شخص کو حراست میں بھی لیا گیا ہے۔ الور کے ایس پی کے مطابق اب تک کی جانچ میں ایسا کوئی ثبوت نہیں ملا ہے ،

جس سے یہ کہا جاسکے کہ اس کے پیچھے گئو رکشکوں کاہاتھ ہے۔الور کے ایس پی راہل پرکاش کے مطابق اس سلسلہ میں ایک شخص کو گرفتار کیا گیا ہے اور دیگر 6 افراد کی شناخت کرلی گئی ہے ۔ الور پولیس کے مطابق جس ٹرک سے گایوں کو لے جایا جارہا تھا ، اس سے پانچ مردہ اور ایک زندہ گائے برآمد ہوئی ہے ۔ پولیس کے مطابق ٹرک کا ٹائر بھی غائب ہے۔

ایس پی نے مزید بتایا کہ گرفتار شخص نے عمر اور اس کے ساتھیوں کے ساتھ مار پیٹ کا اعتراف کرلیا ہے ۔ ساتھ ہی ساتھ اس نے لاش کو ٹھکانے لگانے کی بات بھی تسلیم کرلی ہے ۔ تاہم پولیس اس واقعہ کو فی الحال صرف قتل کا مان کر تفتیش کررہی ہے۔ پولیس کے مطابق جانچ کے بعد ہی کچھ یقینی طور پر کہا جاسکتا ہے کہ اس میں گئو رکشکوں کا ہاتھ ہے یا نہیں۔
خیال رہے کہ پولیس نے عمر کے چچا کی شکایت پر آئی پی سی کی دفعہ 302 (قتل ) ، دفعہ 147 ( فساد کرنا ) اور دفعہ 307 ( اقدام قتل ) کے تحت کیس درج کرلیا ہے ۔

Urdu-Arabic-Keybaord11

ISLAMIC-MESSAGES