dushwari

دلت طلب علم کی خود کشی سے پیدا ہونے والا بحران شدت اختیار کر گیا(مزید اہم ترین خبریں)

یونیورسٹی کے 10پروفیسروں نے انتظامی عہدوں سے استعفے دے دیئے 

نئی دہلی ۔ 21 جنوری (فکروخبر/ذرائع) ریاست تلنگانہ میں واقع حیدرآباد یونیورسٹی میں زیر تعلیم پی ایچ ڈی کے دلت طلب علم کی خود کشی سے پیدا ہونے والا بحران شدت اختیار کر گیا ہے اور یونیورسٹی کے 10پروفیسروں نے اپنے انتظامی عہدوں سے استعفے دے دیئے ہیں۔ ذرائع ابلاغ کی رپورٹ کے مطابق استعفے دینے والے تمام پروفیسرز کا تعلق اقلیتوں اور نچلی ذاتوں سے ہے اور ان کے بقول انہوں نے یہ اقدام 26سالہ روہیت ویمولا سے اظہار یکجہتی کیلئے کیا ہے جس نے یونیورسٹی سے نکالے جانے کے بعد دوبارہ داخلہ لینے کی کوششوں میں ناکامی کے بعد ہاسٹل میں پھندہ لگا کر خودکشی کرلی تھی۔

مستعفی ہونے والے پروفیسر نے بھارت کی مرکزی وزیر برائے انسانی وسائل سمریتی ایرانی کے اس بیان پر بھی شدید تنقید کی ہے کہ جس میں انہوں نے روہیت ویمولا کی خودکشی کے بعد یونیورسٹی انتظامیہ کے رویئے کے خلاف احتجاج کی مذمت کی تھی۔ دریں اثناء حیدرآباد یونیورسٹی سے دلت طلبہ کے اخراج پر احتجاجی مظاہرے جاری ہیں۔ ان مظاہروں کے شرکاء روہیت ویمولا کے دیگر چار ساتھیوں کو یونیورسٹی میں دوبارہ داخلہ دینے اور روہیت ویمولا کے خاندان کو ہرجانہ ادا کرنے کا مطالبہ کر رہے ہیں۔ حیدر آباد یونیورسٹی کی انتظامیہ نے روہیت ویمولا اور اس کے ساتھیوں کو دی گئی سزا میں کمی پر غور شروع کر دیا ہے ۔علاوہ ازیں یونیورسٹی کو کچھ دن کیلئے بند کرنے پر بھی غور جاری ہے ۔ دریں اثناء بھارتی انتہا پسندوں نے اس موقع کو بھی مسلمانوں اور اسلام کے خلاف زیر افشانی کیلئے استعمال کرنا شروع کر دیا ہے ۔بھارتی سیاسی جماعت جنتا دل کے رہنما کے سی بتاگی نے دلت طلبہ سے اظہار یکجہتی کیلئے حیدر آباد یونیورسٹی کے دورے کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ یونیورسٹی تعلیمی مرکز کی بجائے دلت مخالف سوچ رکھنے والی تنظیم بن چکی ہے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ بھارت میں دلتوں اور اعلیٰ ذاتوں کو تقسیم کرنے کی شازش کی جا رہی ہے۔


دن میں دو بار دانتوں کو برش کرنا دل کے امراض سے بچنے کے لئے مفید ہے ،ماہر امراض قلب

نئی دہلی ۔ 21 جنوری (فکروخبر/ذرائع) دن میں کم از کم دو بار دانتوں کو برش کرنا دل کے امراض سے بچنے کے لئے مفید ہے ۔ یہ بات ماہر امراض قلب ڈاکٹر سبھاش چندرا نے ایک انٹرویو میں کہی ۔ انہوں نے کہا کہ دانتوں اور مسوڑھوں کی دن میں کم از کم 2 بار صفائی ضروری ہے بصورت دیگر ان میں جمع ہونے والے بیکٹریا آسانی سے خون میں سرایت کر سکتے ہیں ۔ یہ بیکٹریا خون میں لوتھڑے بناتے ہیں جو خون کے دل کی طرف بہاؤ میں رکاوٹ پیدا کر کے ہائی بلڈ پریشر اور دل کے دورے کا باعث بنتے ہیں ۔ انہوں نے بتایا کہ حال ہی میں ایک 18سالہ لڑکی جس کے دل کے والوز سے خون رسنا شروع ہوگیا تھا کے علاج کے دوران انکشاف ہوا کہ ان کے دل کے والوز کی اندرونی تہوں کو نقصان پہنچانے والے بیکٹریا دراصل اس کے مسوڑھوں سے خون میں شامل ہوئے تھے۔ انہوں نے مزید بتایا کہ وہ لوگ جن کے مسوڑھے اکثر خراب رہتے ہیں ان کے دل کے امراض میں مبتلا ہونے کے خطرات بڑھ جاتے ہیں۔ دانتوں اور مسوڑھوں کی صفائی کا مناسب خیال نہ رکھنے کے نتیجہ میں خون میں شامل ہونے والے بیکٹریا دل کے اندر پائے والی شریانوں میں انفیکشن پیدا کر کے اسے بیمار کر دیتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دانتوں اور مسوڑھوں کی مناسب صفائی کا خیال نہ رکھنے والوں کے سانس اور معدے کے خطرناک امراض میں مبتلا ہونے کا خطرہ بڑھ جاتا ہے ۔


پانی برسنے سے مرجھائے پیڑوں کو ملی زندگی 

کوشامبی۔21جنوری(فکروخبر/ذرائع )ضلع میں منگل کو صبح سے لیکر شام تک رم جھم بوندوں کے گرنے کے سلسلہ نے بدھ کو کسانوں نے جب اپنی کھیتی دیکھی تو جہاں کھیتوں نے پودے پانی کی کمی سے مرجھائے رہے تھے وہیں نئی زندگی ملی دیکھ کر کسانوں نے خدا کا شکر ادا کیا ۔ خدا کے بھروسہ رہنے والوں کا کہیں نہ کہیں بھلا ہوہی جاتاہے یہ سوال کا جوب جیسے مل گیا ہو ۔ غیرسچائی والی زمین برابر ہوگئی کسانوں کے چہر ے پانی برسنے سے کھل گئے کسانوں کی کھیتی کیلئے شروعات میں حکومت اورانتظامیہ کی جانب سے کوئی خاص انتظامات نہیں کئے گئے تھے پھر بھی کسانوں کی کھیتی سینچے اوربغیر سینچے کسی طرح سے ہوتی تھی جس سے دونوں فصلوں کے پیدا ہونے سے ضرورتوں کا تال میل بنا رہتاتھا مگر موجودہ سنچائی والی فصلوں کے تئیں کسانوں میں لگاؤ بڑھا ہے ۔ بغیر سینچی زمینوں کو چھوڑ دیا جو کہ غلط تھا آج کی حالت میں اسے احساس ہورہاہے کیوں کہ کافی حدتک کسان خدا کے بھروسہ ہی تھا اور ضلع کاکسان آج بھی خدا کے بھروسے پر ہے اور اس کا بھروسہ ٹوتانظر نہیں آرہاہے ۔


اسٹیپنی چوری گروہ کا پردہ فاش ، چار ملزمان گرفتار

کانپور۔21جنوری(فکروخبر/ذرائع)سردی کے موسم میں شہر میں گاڑیوں کی اسٹیپنی چوری کرنے والے گروہ کو براپولیس نے پکڑنے میں کامیابی حاصل کی ہے۔ پولیس نے گروہ کے چار ملزموں کو گرفتار کرتے ہوئے کئی تھانہ علاقوں میں گاڑیوں سے چوری کی گئی اسٹیپنی کے واقعات کا انکشاف کرتے ہوئے مال برآمدکیاہے۔ ملزمان کے خلاف معاملہ درج کر کارروائی کی جارہی ہے۔ سرد راتوں میں گھروں کے باہر گاڑیاں کھڑی کرنے والوں کی گاڑیوں سے لگاتار چوری ہورہی ہے۔اسٹیپنی چوری کی واردات ان کیلئے مصیبت کاسبب بنی ہوئی تھیں۔ اسٹیپنی چوری کی شکایتیں روز بروز بڑھتی دیکھ ایس ایس پی شلبھ ماتھر نے سی او گووند نگر کی رہنمائی میں سرکل تھانہ علاقے کی پولیس کو چوروں کی جلد گرفتارکرنے کے احکامات دیئے ۔ اسٹیپنی چوروں کی تلاش میں مصروف برا پولیس کو گزشتہ رات اس وقت کامیابی ملی جب دامودر نگر ،پٹیل سدن علاقے کے پیچھے چار بدمعاش چھپے ہوئے تھے ۔ سب انسپکٹر شیتلا پرساد پولیس فورس کے ساتھ گشت کے دوران چاروں بدمعاشوں کو پکڑلیا اور تھانے لے آئی ۔ سب انسپکٹر تلسی رام پانڈے کی پوچھ تاچھ پر پکڑے گئے ملزمان نے جوہی کچی مڑیا ، کے باشندہ مشیر ،کارتک سونی ، ساگر دیویدی اور دھیرج گوتم ہیں۔ گفرفتا ملزمان نے پوچھ تاچھ میں اپنا گناہ قبول کرلیا ہے ،پولیس نے ملزمان کی نشاندہی پر گاڑیوں سے چوری کی گئی اسٹیپنی اور آٹوپارٹس برآمد کرلیا ۔ سی او گووند نگر وشال پانڈے نے بتایا کہ چاروں ملزمان کے خلاف درج کر جیل بھیجا جارہاہے ۔


ضلع میں شور ، سوتی پولیس ، جاگتے چور

کوشامبی۔21جنوری(فکروخبر/ذرائع )ضلع کے سبھی تھانو ں اور چوکیوں کے علاقوں میں چوریوں اور رہزنی کا دوربرابر چل رہاہے جس پر قدغن لگانا تو دور بلکہ اسے بڑھاوا ملتا نظرآرہاہے سردی کے موسم میں پولیس گشت بھی متاثر ہے جس سے چوروں کے حوصلے بلند نظرآرہے ہیں ایسا احساس ہورہاہے کہ چور رات بھر جاگ کر لوگوں کی گرہستی کھنگالنے کا کام کررہے ہیں ۔وہیں ضلع میں یہ شور بھی سننے کو مل رہاہے کہ جب پولیس سوتی ہے تبھی چوروں خو موقع مل پاتاہے ۔ جوروں کو پتہ ہے کہ پولیس سورہی ہے تبھی تو چور بے دھڑک ہوکر چوری کررہے ہیں ۔ضلع میں چوریوں کا سلسلہ رکنے کا نام ہی نہیں لے رہاہے بلکہ دن بدن اس میں اضافہ ہوتاجارہاہے جس سے انکار نہیں کیا جاسکتاہے اخبارات کے ذریعے سے متعلقہ ذمہ داروں کا دھیان مبذول کراتے ہوئے حفاظتی بندوبست کو درست کرنے کی ضرورت ہے جس سے چوروں کو ذریعے لوگوں کی کھنگالی جانے ولی گرستی بچ سکے ورنہ چوروں کے حوصلے تو بلند ہیں ہی کوئی نہ کوئی ان کا شکار بنتاہی رہے گا۔ 


لوہت ایکسپریس ٹرین میں ایک مسافر کی موت

گورکھپور۔21جنوری(فکروخبر/ذرائع )گوہاٹی سے جموں جانے والی لوہت ایکسپریس میں دوپہر دیوریا کے پاس ایک مسافر کی طبیعت خراب ہوگئی ۔ مسافروں کی بتانے پر ٹی ٹی ای نے کنٹرول روم کو خبر دی کہ ٹرین کے گورکھپور اسٹیشن پہنچنے پر ڈاکٹر نے اسے مردہ قرار دیا جیب میں ملے کاغذ سے پتہ چلا کہ آسام کے الی پور کے باشندے نارائن تانبی (۵۵)لدھیانہ کی فیکٹری میں کام کرتے تھے ۔گزشتہ دن لوہت ایکسپریس سے وہ لدھیانہ جانے کیلئے گھر سے نکلے تھے جرنل کوچ میں بیٹھے دوپہر ایک بجے ٹرین کے دیوریا ریلوے اسٹیشن پررکنے کے بعد بھوجالیا اسے کھانے کے بعد نارائن کی طبیعت خراب ہوگئی ۔ بے ہوش ہونے پر جنرل کوچ کے مسافروں نے معاملہ کی اطلاع ٹی ٹی ای کو دی ۔ٹی ٹی ای نے ریلوے کنٹرول روم کو مطلع کیا دوپہر دوبجے ٹرین کے گورکھپور اسٹیشن پہنچنے پر ریلوے کے ملازمین ڈاکٹر کو لیکر جنرل کوچ میں پہنچے جانچ کے بعد ڈاکٹر نے نارائن سوامی کو مردہ قرار بتایا ۔ اطلاع پر پہنچی جی آر پی نے لاش قبضہ میں لینے کے بعد جیب سے ملے کاغذ سے شناخت کر خاندان کے لوگوں کو اطلاع دی ۔گھروالوں نے بتایا کہ لدھیانہ کی ایک فیکٹری میں کام کرنے والے نارائن سوامی ایک جنوری کو چھٹی لیکر گھر آئے تھے ۔ 


مالک مکان کو زخمی کر ڈکیتوں نے لوٹالاکھوں کاسامان

گورکھپور۔21جنوری(فکروخبر/ذرائع )تھانہ پپرائچ علاقے کے سبحان علی محلے کے ایک گھر میں داخل ہوئے ڈکیتوں نے جم کر ہنگامہ کیا اورمکان مالک کو زخمی کر گھنے اورپچاس ہزار روپیہ لوٹ کر فرار ہوگئے ۔ وہیں ایک ڈکیت کو فرار ہوتے ہوئے لوگوں نے پکڑ لیا ۔ غصہ میں آئے لوگوں نے ڈکیت کو پیٹ کر موت کے گھاٹ اتار دیا موقع پر پہنچی پولیس نے لاش کو قبضہ میں لیکر جانچ شروع کردی ہے ۔اطلاعات کے مطابق گزشتہ شب تقریباً تین بجے پپرائچ علاقے کے جنگل سبحان علی کے ٹولا کھجوا کے باشندے طوفانی کے گھر میں ایک درجن ڈکیت لوہے کی راڈ کے ساتھ گھر میں داخل ہوگئے اور حملہ کردیا ایک ڈکیت نے طوفانی کے سر پر لوہے کی راڈ سے حملہ کرزخمی کردیا ۔ ڈکیتوں نے لاکھوں کے زیور لیکر فرار ہوگئے ۔ اسی بیچ شور سن کر لوگوں نے ایک ڈکیت کو پکڑ لیا اور اس کی پٹائی کی جس سے اس کی موت ہوگئی ۔ ابھی تک لاش کی شناخت نہیں ہوپائی ہے ۔ پولیس معاملہ کی چھان بین میں مصروف ہے ۔ 


پائپ لائن بچھانے کا مطالبہ 

فتح پور۔21جنوری(فکروخبر/ذرائع )شہر علاقہ کے آواس وکاس کالونی کے باشندے احسان خان نے آواس وکاس سے ملے ہوئے خلیل نگر میں پائپ لائن بچھانے کا مطالبہ کیا ہے ۔ پائپ لائن نہ ہونے سے لوگوں کو دقتوں کا سامنا کرنا پڑرہاہے یوم تحصیل کے موقع پر کی گئی درخواست میں پائپ لائن کے علاوہ آواس وکاس کالونی و منڈبھاون گلی میں توٹی پلیا کو بھی بنوائے جانے کا مطالبہ کیا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ توٹی پلیا ہونے کی وجہ سے راہگیر زخمی ہورہے ہیں ۔


سربراہ کی موت کے بعد منسوخ ہوگا انتودے کارڈ 

اناؤ۔21جنوری(فکروخبر/ذرائع )اترپردیش میں اب انتودے راشن کارڈ نہیں بنائے جائیں گے ۔ سرکاری ذرائع نے آج یہاں بتایا کہ رسد حفاظت قانون رائج ہونے کے ساتھ راشن کارڈوں کی موجودہ شکل بدل جائے گی ۔ انتودے ،ان یوجنا کے مستحق خاندانوں کی سربراہ کی موت کے ساتھ ہی اس خاندان کا انتودے راشن کارڈ منسوخ ہوجائے گا ۔انہوں نے بتایا کہ اس کارڈ کا نہ تو تجدید ہوگی اور نہ ہی خاندان کے کسی دیگر ممبر کا سربراہ کی حیثیت سے نام درج ہوگا۔ اس کی جگہ پر متعلقہ خاندان کو رسد حفاظت قانون کے دائرے میں پرارٹی ہاؤس ہولڈ (پی ایچ ایچ )میں لاکر سستے غلے کی سہولیات فراہم کرائے جائیں گی ۔


قومی ہائی وے ہوگی فور لین 

رام پور۔21جنوری(فکروخبر/ذرائع )کاٹ گودام ہائی وے ۶۱۷ کروڑ روپئے کی لاگت سے تعمیر ہوگی ۔ مرکزی حکومت نے رام پور ۔کاٹ گودام قومی شاہراہ کو فورلین بنانے کو منظوری دینے کے ساتھ اس کے لئے ۶۱۷ کروڑ کی رقم منظور کردی ہے ۔ مرکزی وزیر مختار عباس نقوی نے آج یہاں بتایا کہ لمبے عرصے سے رام پور سے وایا بلاس پور ۔ ردھ پور تک ہائی وے کی خستہ حالت سے راہگیر پریشان تھے ۔سڑک ٹوٹی ہونے سے سرور نگری نینی تال آنے والے سیاحوں کو بھی کافی دقتیں ہورہی تھیں سیاحت کاروبار بھی بری طرح سے متاثرتھا مسٹرنقوی نے بتایا کہ سڑک ٹرانسپوڑٹ وزیرنتن گڈکری سے کئی بار کی ملاقات کے بعد رام پور سے کاٹ گدام تک کی ۹۸ کلومیٹر لمبے ہائی وے پر فورلین تعمیر کو منظوری مل گئی ہے اس میں خرچ ہونے والی ۶۲۷ کروڑ روپئے کی رقم بھی منظور ہوچکی ہے ۔ انہوں نے بتایاکہ رام پور سے کاٹ گودام کے بیچ اترا کھنڈ کے حصے میں پڑنے والی تین ریلوے کراسنگ پر فلائی اوور بھی بنیں گے خود گڈکری ۱۱ فروری کو ایک پروگرام میں فورلین تعمیر کی بنیاد رکھیں گے ۔

Urdu-Arabic-Keybaord11

ISLAMIC-MESSAGES