dushwari

دانیال رضا

حکمرانوں کی لوٹ مار اور نظام کی بربادی نے غریب عوام کو دربدر ک ٹھوکریں کھانے پر مجبور کر دیا ہے جس کا اظہار یورپ میں چار اطراف سے آنے والے تارکین وطن کا منہ زور سیلاب ہے جیسے روکنے کی ہر کوشیش ناکام اور امید نامراد ہے۔یورپین یونین کی سرحدی ایجنسی فرنٹکس کے مطابق گذشتہ صرف ایک ماہ کے دوران یورپ میں ایک لاکھ سات ہزار پانچ سو تارکین وطن یورپ میں داخل ہوئے ہیں اور روان سال کے دوران یہ تعداد ساڑھے سات لاکھ تک پہنچ جائے گئی جن میں زیادہ تعداد بلقانی اور شامی مہا جرین کی ہے۔

تحریر: غوث سیوانی، نئی دہلی

ہندوستان کی آزادی کا خواب اس ملک کے ہندووں اور مسلمانوں کے اتحاد سے پورا ہوا ۔ ملک کے سبھی طبقات نے جنگ آزادی میں برابر کا حصہ لیا مگر یہ عجیب بات ہے کہ آزادی کے بعد مسلمان مجاہدین آزادی کو نظر انداز کردیا گیا۔ تاریخ کی کتابوں سے لے کر عجائب گھروں تک سے ان کی نشانیاں مٹائی جاچکی ہیں۔ کہیں کہیں اگر ذکر ملتا بھی ہے تو صرف ان مسلمانوں کا جو آزادی کے بعد کانگریس سے وابستہ رہے اور جواہر لعل نہرو کی سرکار میں وزارت پائی۔ حالانکہ ہزاروں ایسے مجاہدین آزادی تھے جنھوں نے اپنی جانیں قربان کی تھیں مگر آج ان کا ذکر تک نہیں ملتا ہے۔

سید سحبان ثاقب 

اس دنیا میں جو بھی آیاہے، اس کو ایک نہ ایک دن جاناہے،کسی کا جانا ساری دنیا کے لیے باعث خسران ہوتاہے، کسی کے جانے سے دنیا بہت خوش ہوتی ہے، اوربہت سارے ایسے ہوتے ہیں، جن کے جانے سے دنیا والوں کو کوئی فرق نہیں پڑتا،کچھ دن پہلے اخبارات نے ایک خبر شائع کی، وہ خبر دین پسنداور غیور لوگوں کے لیے خبر صاعقہ تھی،وہ خبرمیدان جہاد کے جیالوں اور اہل حق کی خاطر قربانی دینے والوں کے لیے انتہائی روح فرسا تھی، وہ خبر تھی اس صدی کے جاں باز و مجاہد، طالبان کے مذہبی رہنما جن کو دنیا امیر المؤمنین کے نام سے جانتی ہے، ملا محمد عمر کے انتقال کی خبر تھی، وہ روح فرسا خبر اسلام دشمنوں کے لیے کسی نعمت غیر مترقبہ سے کم نہ تھی،

Urdu-Arabic-Keybaord11

ISLAMIC-MESSAGES