dushwari

تازہ ترین خبر:

حفیظ نعمانی

آج جنوری کی 15 تاریخ ہے۔ آج کے بعد مسجد کے ہر متولی کو کوشش کرنا چاہئے کہ خانۂ خدا کے احاطہ میں کوئی خاکی وردی والا نظر نہ آئے۔ غور کرنے کی بات یہ ہے کہ جس نے بھی صوتی آلودگی کو روکنے کیلئے مفاد عامہ کی آڑ میں ہائی کورٹ میں رِٹ دائر کی کیا اس کے پیش نظر نئے نئے مندروں میں رات دن بجنے والے لاؤڈ اسپیکر تھے؟ ظاہر ہے کہ اس کا کوئی سوال ہی نہیں پیدا ہوتا اس لئے کہ برسوں سے جس ملک میں مسجد بنانے پر پابندی ہو اور مندر بنانے کے لئے بڑے بڑے فٹ پاتھ بھی ہضم کرلئے جائیں

ڈاکٹر سید فاضل حسین پرویز

طوفان گزر گیا۔ مگر تباہی کے اَنمٹ نقوش چھوڑ گیا۔ بھرم اور بھروسہ کی 68سالہ سنگی دیواروں میں جابجا شگاف دکھائی دینے لگے ہیں۔ ایک ہولناک سناٹا جس میں اپنے آپ سے کی جانے والی سرگوشیاں سنائی دیتی ہیں۔ کیا سب کچھ ٹھیک ہے؟ کیا ایوان انصاف میں قانون اور انصاف کے محافظین میں صلح کے باوجود 130کروڑ ہندوستانی عوام کا بھرم بحال ہوپائے گا۔ اس ملک کی سب سے بڑی عدالت میں جو کچھ ہوا جن اندیشوں کا اظہار کیا گیا جو باتیں منظر عام پر آئیں‘ اُس سے کم از کم اقلیتوں کو سب سے بڑا دھکہ لگا کیوں کہ اب تک عدلیہ ہی ان کے لئے اُمید کی آخری کرن رہ گئی تھی‘

غوث سیوانی

دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت ،اپنے آئینی نظریے کو تبدیل کرنے جارہی ہے؟ کیا اب ہندوستان ایک ایسے نظام کی طرف بڑھ رہا ہے، جہاں صرف اکثریتی طبقے کا راج ہوگا اور اقلیتوں کو مساوی حق سے محروم کردیا جائے گا؟ جب دنیاماضی کے نظریات کو پیچھے چھوڑ، نئی فکر کے ساتھ آگے بڑھنے کی کوشش کر رہی ہے،ایسے وقت میں کچھ لوگ بھارت کو ویدک دور میں لے جانا چاہتے ہیں؟آرایس ایس کے ہندووادی نظریے اور ’’ہندی، ہندو، ہندواستھان‘‘جیسے نعرے کے سبب اس قسم کے سوال توماضی میں بھی اٹھتے رہے ہیں مگرانھیں تازہ کردیا ہے کئی حالیہ واقعات نے۔

Urdu-Arabic-Keybaord11

ISLAMIC-MESSAGES