Live Madinah

makkah1

dushwari

نئی دہلی ۔13جنوری2018(فکروخبر/ذرائع)   سپریم کورٹ کے چار ججوں نے جمعہ کو چیف جسٹس آف انڈیا دیپک مشرا کے خلاف کھلے عام آواز بلند کی ہے۔ یہ پہلا موقع تھا جب سپریم کورٹ کے سینئر ججوں نے پریس کانفرنس کر عدلیہ کے حالات پر تشویش کا اظہار کیا۔ اس پریس کانفرنس کے بعد عدلیہ اور سیاسی گلیاروں میں ایک ہلچل سی مچ گئی۔ بی جے پی کے سینئر لیڈر یشونت سنہا نے چاروں ججوں کے فیصلے پر اپنا موقف رکھا ہے۔

نئی دہلی:12؍جنوری2018(فکروخبر/ذرائع) ایک غیر معمولی پیش رفت میں سپریم کورٹ کے چار ججوں نے آج الزام لگایا کہ ملک کے اعلی ترین عدالت کے طریقہ کار میں انتظامی ضابطوں پر عمل نہیں ہورہا ہے اور چیف جسٹس کے ذریعہ عدالتی بنچوں کو سماعت کے لئے مقدمات من مانے ڈھنگ سے الاٹ کرنے کی وجہ سے عدلیہ کے اعتبار پر داغ لگ رہا ہے۔سپریم کورٹ کے دوسرے سینئر ترین جسٹس جستی چملیشور نے جسٹس رنجن گوگوئی، جسٹس مدن بی لوکر اور جسٹس کورین جوسف کے ساتھ آج صبح اپنے تعلق روڈ کی رہائش گاہ پر ایک پریس کانفرنس میں یہ الزامات لگائے۔

نئی دہلی:10؍جنوری2018(فکروخبر/ذرائع) سپریم کورٹ نے گلے میں پھندا ڈال کر پھانسی دینے کے بجائے سزائے موت دینے کا کوئی دوسرا متبادل تلاش کرنے سے متعلق درخواست پر مرکزی حکومت کو اپنا موقف واضح کرنے کا آج حکم دیا۔چیف جسٹس دیپک مشرا کی صدارت والی تین رکنی بنچ نے وکیل رشی ملہوترا کی درخواست پرسماعت کرتے ہوئے مرکزی حکومت کو چار ہفتوں کے اندر تفصیلی حلف نامہ دائر کرکے اپنا رخ واضح کرنے کو کہا۔سپریم کورٹ نے ایڈیشنل سالیسٹر جنرل پنکی آنند کی معرفت مرکزی حکومت سے دیگر ممالک میں سزائے موت دینے کے مختلف طریقوں کی تفصیلی معلومات فراہم کرنے کو کہا۔

نئی دہلی:12دسمبر2017(فکروخبر/ذرائع) سپریم کورٹ نے مفرور شرا ب کاروباری وجے مالیہ کے حوالگی سے متعلق سماعت میں ہونے والی تاخیر کے سلسلے میں مرکزی حکومت کو آج سخت سرزنش کرتے ہوئے وزارت خارجہ کے سکریٹری کو سمن کرنے کا اشارہ بھی دیا۔ عدالت عظمی نے مرکزی حکومت کے لاآفیسرس کو مالیہ کے حوالگی کی کارروائی میں ہونے والی تاخیر کا تفصیلی سبب بتانے کی بھی ہدایت دی۔ عدالت نے کہا کہ مرکز سپریم کورٹ کے حکم کے باوجود حوالگی کارروائی میں تاخیر کیسے کرسکتا ہے ۔

حکومت اطمینان بخش وضاحت کرنے میں ناکام،عدالت عالیہ کا فیصلہ خوش آئند ہوگا: مولانا ارشد مدنی

نئی دہلی۔29نومبر2017(فکروخبر/ذرائع)سپریم کورٹ نے آج آسام میں جاری شہریت تنازع سے متعلق تقریباً آدھا درجن عرضداشتوں پرسماعت کرتے ہوئے ’اصل مقیم‘شہریت معاملے میں اپنافیصلہ محفوظ کرلیا ہے۔ جسٹس رنجن گوگوئی اورجسٹس روہنٹن نریمن کی بینچ کے سامنے آج جمعیۃ علما ہند ،آل آسام مائینارٹی اسٹوڈنٹ یونین ( آْمسو)، کانگریس کے سات ممبران اسمبلی اور آدی واسی اور بنگالی ہندو ؤں کی جانب سے دائر عرضداشتوں پرکئی گھنٹے تک بحث ہوئی ۔آمسو کی پٹیشن پر جمعیۃ علماء ہند کے وکیل کپل سبل نے ، کانگریس کے ممبران اسمبلی کی پٹیشن پرسلمان خورشید نے، دوآدیواسی عرضداشتوں پراندرا جے سنگھ اور بنگالی ہندؤں کی دوعرض داشتوں پر سنجے ہیگڑے نے بحث کی ۔بحث مکمل ہونے کے بعد بنچ نے فیصلہ محفوظ کرلیا ہے ۔ 

نئی دہلی ۔27 نومبر2017(فکروخبر/ذرائع)سپریم کورٹ نے آج گجرات میں ہونے والے انتخاب کے تناظر میں مغربی بنگال کے شورش زدہ دارجلنگ اور کلیمپونگ اضلاع سے مرکزی مسلح پارلیمانی فورسز( سی اے پی ایف) کے آٹھ کمپنیوں میں سے چار کو واپس لینے کے لئے مرکز کو اجازت دے دی ہے۔ چیف جسٹس دیپک مشرا اور جسٹس اے ایم کھانولکر اور ڈی وائی چندراچڈ کی ایک بینچ نے شورش زدہ اضلاع سے نیم فوجی دستوں کو ہٹانے کی مرکز کی اپیل پر اتفاق کرلیا ہے۔

نئی دہلی:24؍نومبر2017(فکروخبر/ذرائع)سپریم کورٹ نے بلقیس بانو اجتماعی عصمت دری معاملے میں گجرات حکومت سے آج پھر پوچھا کہ کیا اس نے اس معاملے میں قصوروار قرار دئے گئے پولیس اہلکاروں کے خلاف ضابطہ کی کوئی کارروائی کی ہے یا نہیں؟ عدالت نے ریاستی حکومت کو چھ ہفتہ کے اندر یہ جانکاری دستیاب کرانے کی ہدایت دی ہے۔۔چیف جسٹس دیپک مشرا، جسٹس اے ایم کھانویلکر اور جسٹس ڈی وائی چندرچوڑ کی بنچ نے حکومت گجرات کی نمائندگی کر رہے ایڈیشنل سالیسیٹر جنرل تشار مہتا کی یہ گزارش قبول کر لی ہے کہ اس معاملے سے منسلک سرکاری اتھارٹیز کو حکم دینے کے لیے کچھ مزید وقت دیا جانا چاہیے۔

نئی دہلی ۔18اکتوبر2017(فکروخبر /ذرائع)  سپریم کورٹ کی جانب سے قومی راجدھانی خطہ میں پٹاخوں کی فروخت پر پابندی عائد کئے جانے کے بعد پولیس نے آج 13 الگ الگ مقامات پر چھاپہ مار کر 1241 کلوگرام پٹاخے ضبط کئے اور اس سلسلے میں 29 لوگوں کو گرفتار بھی کیا۔
پولیس ذرائع نے بتایا کہ دہلی پولیس کمشنر امولیہ پٹنائک نے تمام 13 علاقوں کے ڈپٹی کمشنروں کو ہدایت دے کر پٹاخوں کی فروخت پر عائد پابندی کےحکم کو نافذ کرنے کو کہا تھا۔ مسٹر پٹنائک نے ڈپٹی کمشنروں سے یہ یقینی بنانے کیلئے کہاکہ پٹاخوں کی فروخت نہ ہونے پائے۔

نئی دہلی:12؍اکتوبر2017(فکروخبر/ذرائع) سپریم کورٹ نے اپنے ایک اہم فیصلے میں کہا کہ 18سال سے کم عمر کی بیوی کے ساتھ جسمانی تعلقات قائم کرنا ریپ ہے۔ جسٹس مدن بی لوکر اور جسٹس دیپک گپتا کی بنچ نے ایک غیر سرکاری تنظیم انڈی پینڈنٹ تھاٹ کی جانب سے دائر عرضی پر مذکورہ حکم صادر کیا۔اس تنظیم نے سپریم کرٹ میں دائر اپنی عرضی میں کہا تھاکہ 18سال سے کم عمر کی نابالغ بیوی کے ساتھ جنسی تعلق قائم کرنے کو جرم قرار دیاجائے۔

نئی دہلی:04؍اکتوبر2017(فکروخبر /ذرائع)سپریم کورٹ نے کہاکہ روہنگیا مسلم پناہ گزینوں کے معاملے میں دلائل قانونی نکات پر مبنی ہونے چاہئیں نہ کہ جذباتی پہلووں پر۔ چیف جسٹس دیپک مشرا کی صدارت والی تین رکنی بنچ نے روہنگیا پناہ گزین سلیم اللہ اور دیگر کی عرضی کی اگلی سماعت کے لئے تیرہ اکتوبر کی تاریخ مقرر کرتے ہوئے کہا کہ اس معاملے میں دلائل جذباتی پہلووں پر نہیں بلکہ قانونی نکات پر مشتمل ہونے چاہئیں۔

صفحہ 1 کا 3