dushwari

جناب ڈاکٹر ملپا علی صاحب دامت برکاتھم

(فکروخبراداراتی تحقیقی مضمون )

ولادت اور نام:۔
ڈاکٹر صاحب کی پیدائش ۱۹؍ذی القعدہ ۱۳۳۸ ؁ھ مطابق ۵؍اگست۱۹۲۰ ؁ء بمقام ملپا ہاؤس، ملکی سائیں 
(شوکت علی روڈ)بھٹکل میں ہوئی۔ مشہور بزرگ مفسر قرآن شیخ مخدوم فقیہ علی مہائمی(متوفی۸۳۵ ؁ھ) کے نام کی نسبت سے آپ کا نام فقیہ علی رکھا گیا۔ لیکن آپ نے اپنے لئے صرف علی ہی پسند کیا۔فقیہ علی کبھی نہیں لکھا۔(تذکرہ والد ۔ص؍۲۹ مؤلف مولانامحمد شفیع قاسمی بھٹکلی)
بچپن:۔
بچپن ہی میں والدین کا انتقال ہوا تھا۔۔۔۔والدین کے انتقال کے بعد (آپ کی ) پرورش ماموں صاحب (محمد حسین صاحب،جو حکیم الاسلام قاری محمد طیب قاسمی ؒ کے مرید تھے)نے کی۔بچپن ہی سے خاموش طبیعت اور دینی مزاج کے حامل تھے۔ کھیل کود سے بالکل رغبت نہ تھی، جسمانی طور پر بہت کمزور تھے، بچپن سے عبادت کا شوق تھا ، جوانی ہی سے آپ تہجد گذار تھے۔بچپن آبائی گھر میں گذارا۔۔۔۔بعد میں ۱۹۶۳ ؁ء میں نوائط کالونی میں ایک مکان (طیبہ منزل ) تعمیر کیا تو وہاں منتقل ہوئے۔ الحمدللہ تا حال اسی مکان میں مقیم ہیں۔(بحوالہ سابق ۔خلاصہ ۔ص؍۳۰ ؍۳۱)

ڈاکٹر نذیر احمد ندوی 
شعبۂ عربی دارالعلوم ندوۃ العلماء لکھنؤ۔یوپی

جناب امین الدین شجاع الدین ایک بے باک صحافی اورصاحب طرز ادیب تھے، بارگاہ ایزدی سے انہیں ذہن رسا ،فکر اخاذ ،نظرِ نقاد اورطبع حساس کے پہلو بہ پہلو سلیس ورواں قلم بھی عطا ہوا تھا۔ ان کی تحریریں معنوی طورپر جس طرح پُرمغز اورپُرکشش ہوتی تھیں اسی طرح وہ ظاہری طورپر خوش نویسی اورخوش خطی کی شاہکار ہوا کرتی تھیں ۔

ڈاکٹر نذیر احمد ندوی 

یادش بخیر !
ڈاکٹر محمد عبدالعلیم عثمانی جوادبی وشعری دنیا میں علیمؔ عثمانی کے نام سے مشہور تھے ، نہ صرف طبیب حاذق، کامیاب ہومیوپیتھ معالج ،بلکہ معروف ومقبول کہنہ مشق شاعر تھے۔ ان کی شخصیت باغ وبہار ،طبیعت مرنجان مرنج ،آواز سامعہ نواز اورانداز دلنواز تھا ۔بارگاہ ایزدی سے اگرانھیں ایک طرف جمال ظاہر سے سرفراز کیاگیا تھا تودوسری طرف دست قدرت نے انھیں بڑی فیاضی سے حسن باطن سے نواز اتھا،اس طرح وہ حسنِ صَوت وصورت اورخوبئ سیرت سے مالامال تھے۔

Urdu-Arabic-Keybaord11

ISLAMIC-MESSAGES