dushwari

انجمن بوائز ہائی اسکول کے طلباء کے مابین ادبی مقابلوں کا انعقاد

تعلیم کا مطلب امتحان ڈگریاں نہیں ہے ،بلکہ تعلیم تعمیر اور تہذیب کا نام ہے : جناب عبدالرحمن باطن 

بھٹکل۔11؍ جنوری۔2018(فکرو خبر نیوز) طلباء کے اندر پوشیدہ صلاحیتوں کو اجاگر کرنے کے لیے اسکول کی جانب سے مختلف طرح کے پروگرامات اور اور ادبی مقابلے منعقد کئے جا تے ہیں تاکہ طلباء ان مواقع سے فا ئدہ اٹھا تے ہو ئے مستقبل میں ایک اچھے قائد اور رہنما بن کر سامنے آئیں ،اسی کے پیش نظر انجمن بوائز ہا ئی اسکول کے طلباء کے مابین آج صبح بی ایڈ کالج کے کانفرنس ہال میں ادبی مقابلے کا انعقاد کیا گیا ، جس میں طلباء نے قرات ، نعت ، اردو تقاریر ، انگیریزی تقاریر ، کنڑا تقاریر، ہندی تقاریر میں اپنی صلاحیتیوں کا مظاہرہ کیا ، جس میں ممتاز طلباء کو سالانہ پروگرام میں انعامات سے بھی نوا زا جا ئیگا ،

جلسہ میں مہمان خصوصی کے طور پر شرکت کر نے والے انجمن پی یو کالج کے پرنسپال جناب کولا یو سف صاحب نے طلباء کو اسکول کی جانب سے منعقد کئے جانے والے مختلف ادبی اور لٹریری مقابلوں میں بڑھ چڑھ کر حصہ لینے کی ترغیب دیتے ہو ئے کہا کہ وہ بھی پڑھنے کے زمانے میں بہت ذہین وغیرہ نہیں تھے لیکن انھوں نے اس طرح کے پروگرامات اور مواقع کو غنیت سمجھتے ہو ئے اس میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا ،جس کا فا ئدہ وہ آج بھی محسوس کر رہے ہیں ،مزید انھوں نے طلباء سے درخواست کی کہ وہ تعلیم کے ساتھ انصاف کریں ،والدین تکالیف برداشت کر کے ان کے لئے جو پیسہ خرچ کر رہے ہیں ان کی تعلیم پر جو روپیہ لگا رہے ہیں وہ اس کے ساتھ انصاف کرتے ہو ئے اپنی پڑھائی پر توجہ دے ،اور اس میدان میں کوب محنت کریں ،انھوں نے انجمن کے طلباء کو مخاطب کر تے ہو ئے کہا کہ وہ بھی اسی ادارہ کے فرزند ہیں ،جو آج آپ کے سامنے اس مقام پر کھڑے ہیں ، صدر جلسہ ونائب صدر انجمن حامئی مسلمین بھٹکل جناب عبدالرحمن باطن صاحب نے اپنے صدارتی خطاب میں طلباء کو مبارکباد دیتے ہو ئے تعلیم کے میدان میں مسلمانوں کے کارناموں کا ذکر کر تے ہو ئے ان کے ضمیر کو جھنجھوڑتے ہوئے کہا کہ تم بھی انہی کی اولاد ہو ، اسلاف کے کارناموں کا ذکر کرتے ہو ئے ان کے نقش قدم پر چلنے اور اپنے مستقبل کو سنوارنے کی ترغیب دی ،تعلیم کے تعلق سے وضاحت کر تے ہو ئے کہا کہ تعلیم کے مطلب امتحان میں کامیاب ہو نا اور بڑی بڑی ڈگریاں حا صل کر نے کا نام تعلیم نہیں ہے،بلکہ تعلیم تعمیر وتہذیب کانام ہے ، جس سے انسان کا کردار سنورتا ہے ،س شخصیت کی تعمیر ہو تی ہے ،جس کے لئے انھوں نے کہ اکہ نیک لو گوں اور دیندار لو گوں کی صحبت ضروری ہے ،اس تعلق سے انھوں نے واقعات کی روشنی میں طلباء کو بات سمجھاتے ہو ئے کہا کہ نیکوں کی صحبت آدمی کو نیک اور بروں کی صحبت انسان کو برا بنا تی ہے ، واضح رہے کہ پروگرام کا آغاز محمد زیان قاسمجی کی تلاوت کلام پاک سے ہوا ، محمد ظہیر شیخ نے رسول اللہﷺ کی خدمت میں عقیدت کا تحفہ پیش کیا،جس کے بعد انجمن بوائز ہائی اسکول کے ہیڈ ماسٹر محی الدین خطالی نے آئے ہو ئے مہمانوں کی خدمت میں استقبالیہ کلمات پیش کئے ،جب کہ انجمن کے ٹیچر جناب عبداللہ رکن الدین نے جلسہ کے مہمان خصوصی انجمن پی یو کالج کے پرنسپال جناب یوسف کولا صاحب کا مختصرا تعارف پیش کیا،جب کہ مقابلوں میں حکم کے فرائض مو لوی عبداللہ شریح ندوی ، مولوی ایفاد ندوی ، مولوی سلمان کولا ندوی ، جناب وی ویکش وغیرہ نے نحسن خوبی انجام دئے ،جب کہ نظامت کے فرائض مو لا نا شاہین قمر ندوی نے انجام دیا ، اخیر میں مو صوف ہی کے شکریہ کلمات کے ساتھ پروگرام اختتام کو پہنچا ، اس موقع پر ایڈیشنل سکریٹری جناب شہ بندری اسحاق ،دینیات اور پرائمری بورڈ سکریٹری جناب دامودی آصف ، اسکول بورڈ سکریٹری جناب کو لا عبدالواجد صاحب وغیرہ مو جود تھے ۔

Urdu-Arabic-Keybaord11

ISLAMIC-MESSAGES