dushwari

منگلور ایرپورٹ پر چا ر مختلف گولڈاسمگلنگ کی واردات منظر عام پر(مزید اہم ترین ساحلی خبریں )

جملہ 21لاکھ مالیت کا غیرقانونی سونا ضبط کرلیا گیا ہے

منگلور 16دسمبر (فکروخبرنیوز ) منگلور ایرپورٹ کسٹم افسران کے مطابق تازہ گولڈ اسمگلنگ کی چار واردات میں جملہ 21.22لاکھ مالیت کا سونا ضبط کرلئے جانے کی خبردی ہے ، کسٹم کمشنر ڈاکٹر ایم سبھرامنیم نے یہاں پریس نوٹ میں تفصیلات فراہم کرتے ہوئے بتایا ہے کہ پہلی گولڈ اسمگلنگ کی واردات میں ملزم مسافر سے دو گولڈ کوائن ڈینم پتلون کے پاکیٹ سے ضبط کیا ہے،جب کہ دوسرے کیس میں ، طیارے کے سیٹ کے نیچے دو سونے کے بار چھپائے ہوئے ملے ،یہ گولڈ بار دبئی سے آنے والے ایک مسافر کی جانب سے اُس مسافر کے لئے چھپائے گئے تھے جواسی طیارے سے ممبئی جانے کے لئے اسی نشست کو بک کرائی تھی ،

(بتایاجارہاہے کہ گولڈ اسمگلنگ کرنے کا یہ ایک الگ طریقہ ہے ، چونکہ کسٹم افسران اُنہی افسران کو چیک کرتے ہیں جو بیرون ممالک سے سفر کرتے ہیں تو اس کا فائدہ اُٹھاتے ہوئے گولڈ اسمگلرس اب ایسے طیاروں کا سفر کررہے ہیں جو طیارے ایک ایرپورٹ سے دوسرے ایرپورٹ فوری جایا کرتے ہیں )اس معاملے میں دونوں مسافروں کو گرفتاکرلئے جانے کی بات کمشنر نے بتائی ہے ، اسی طرح تیسرے کیس میں کسٹم افسران نے ملزم مسافر سے ایسا فون ضبط کیا ہے جس فون کی بیٹری میں سونا چھپاکر لایا جارہاتھا۔ چوتھے کیس میں پولیس نے ایک خاتون مسافر کو گرفتار کیا جو دو سونے کے بار جسم سے چپکا کر اسمگل کی کوشش کررہی تھی ۔پریس نوٹ میں سبھرامنیم کمشنر نے کہا ہے کہ اسمگلرس اب گولڈ اسمگلنگ کے طریقوں کو بدل رہے ہیںِ مگر کسٹم افسران ان پر سخت نگاہ رہے ہوئے ہیں ۔ 


اُڈپی: سڑک حادثے میں جے ڈی ایس یوتھ لیڈر ہلاک 

اُڈپی:16دسمبر (فکروخبرنیوز ) پڈوبدری سے تعلق رکھنے والے ایک جے ڈی ایس یوتھ لیڈر ،سڑک حادثے میں ہلاک ہونے کی خبر موصول ہوئی ہے ،اطلاع کے مطابق یہ حادثہ ودیا نکیتن اسکول، کاپو کے قریب پیش آیا، جب کہ مہلوک لیڈر کی شناخت نسچل شیٹی (36) کی حیثیت سے کرلی گئی ہے ، یہ جے ڈی ایس ضلع یونٹ کے صدر تھے، ایک مچھلیوں سے بھری ٹرک نے اس کی بائیک کو کچل دیا تھا۔ سخت زخمی حالت میں نشچل کو قریبی اسپتال لے جایا گیا مگر وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے چل بسا، اس کے ساتھ گاڑی میں موجود اس کا ساتھی موہن سخت زخمی ہے، بتایا جارہاہے ابھی ایک سال قبل نسچل کی شادی ہوئی تھی ۔


سرکاری اسپتالوں میں وینٹی لیٹر بشمول آئی سی یو کی سہولت فراہم کی جائے گی۔یو ٹی قادر

منگلور/بیدر۔16؍دسمبر(فکروخبرنیوز  )صحت و خاندانی بہبود کے وزیر جناب یو ٹی قادر نے کہا کہ اضلاع اور تحصیلوں کے سرکاری اسپتالوں میں وینٹی لیٹر بشمول آئی سی یو کی سہولت فراہم کی جارہی ہیں انھوں نے کہا کہ ریاستی حکومت نے عالمی بنک سے ڈھائی ہزار کروڑ روپیے کا قرض لے کر تمام سرکاری اسپتالوں میں جدید سہولیات فراہم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ سرکاری اسپتالوں کے کمپیوٹروں میں ایک ایسا سافٹ وئیر ڈاؤن لوڈ کیا جائے گا‘ جس میں مریض کی مکمل وضاحت کی جائے گی۔اس مریض کو اپنے ساتھ رپورٹ اور دیگر دستاویزات اسپتال لانے کی ضرورت نہیں ہوگی۔بلاری اور گدگ میں سرکاری آیورویدک اسپتالوں کی تعمیر کا کام آخری مرحلے میں ہے۔دیگر اضلاع میں بھی اسپتال تعمیر کئے جائیں گے۔سرکاری اسپتالوں کیلئے ضرورت کے مطابق دوا کی فراہمی کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔زیادہ مقدار میں دوا کی فراہمی سے بہت دوائیں ایکسپائر ہوجاتی ہیں ‘جناب قادر نے کہا کہ ڈینگو‘ ملیریا‘ چکون گنیا ‘وائین فیلو اور دیگر بیماریوں کی تحقیقات کیلئے بلاری ‘ہبلی‘ باگلکوٹ ‘میسور ‘منگلور اور بیدر میں جدید لیباریٹریوں کو قائم کیا گیا ہے۔ دیگر اضلاع میں بھی ایسی لیبارٹریوں کو قائم کیا جائے گا۔ اگلے بجٹ میں صحت کے علاقے م کیلئے زیادہ گرانٹ جاری کیا جائے گا۔ ریاست کی تمام قدیم 108بسوں کی جگہ نئی بس فراہم کی جائیں گی ۔ اس موقع پر صحت اور خاندانی بہبود محکمہ کے ڈائریکٹر اور دیگر سنئیر آفیسر موجود تھے ۔


ٹیپو جینتی کے موقع پرمڈیکیری فسادات میں جاں بحق ہونے والے شاہ الحمیدکے قتل کے ملزمین پولس حراست میں 

مڈیکیری 16 ؍ دسمبر (فکروخبرنیوز) ٹیپو سلطان جینتی کے موقع پر یہاں پھوٹ پڑنے والے فسادات میں گولی لگنے سے جاں بحق ہونے والے شاہ الحمید کے قتل معاملہ میں پولیس نے تین افراد کوحراست میں لیا ہے۔یاد رہے کہ شاہ الحمید نامی شخص کو چند نامعلوم افراد کی جانب سے گولی مار کر قتل کردیا گیا تھا جس کے دو دن بعد وہ میسور میں علاج کے دوران چل بسا تھا۔ گرفتار شدہ افراد کی شناخت پی یو کاویراپا (31) ایس ایچ بشما (36) اور کے آر رمیش (45) کی حیثیت سے کرلی گئی ہے۔ پولیس ذرائع کے مطابق زعفرانی تنظیموں کی جانب سے ٹیپو جینتی کی پرزور مخالفت کے دوران پتھراؤ کی وجہ سے کٹاپا نامی شخص موقعۂ واردات پر ہلاک ہوگیا جس کے بعد زعفرانی تنظیموں کی جانب سے پرزور احتجاج کے دوران شاہ الحمید کو گولی مار کر قتل کردیاتھا۔ مڈیکیری میں پھوٹ پڑنے والے فسادات کی وجہ سے منگلور ضلع میں بھی حالات کشیدہ ہوئیں تھیں اور جان و مال کا نقصان ہوا تھا۔ تین دن تک دفعہ 144 نفاذ کے بعد حالات معمول پر لوٹ آئے تھے۔ 

Urdu-Arabic-Keybaord11

ISLAMIC-MESSAGES