Live Madinah

makkah1

dushwari

لیبیا کے شہر درنہ میں جنگجوؤں کے ٹھکانوں پر مصر کے تازہ فضائی حملے(مزید اہم ترین خبریں )

قاہرہ ۔30مئی(فکروخبر/ذرائع)مصر اور لیبیا کے لڑاکا طیاروں نے لیبی شہر درنہ اور اس کے نواحی علاقوں میں القاعدہ سے وابستہ مجاہدین شوریٰ کونسل کے ٹھکانوں پر سوموار کی صبح نئے فضائی حملے کیے ہیں۔مصر کے لڑاکا طیاروں نے گذشتہ جمعہ کے بعد سے لیبیا میں انتہا پسند وں کے ٹھکانوں پر متعدد فضائی حملے کیے ہیں۔ لیبیا کی فوج نے اتوار کے روز اس بات کی تصدیق کی تھی کہ مصر کے لڑاکا طیاروں نے اس کے ساتھ رابطے کے ذریعے القاعدہ کی مجاہدین شوریٰ کونسل کے ہیڈ کوارٹرز اور اس سے وابستہ بشر کیمپ پر فضائی بمباری کی تھی۔مصر لیبیا میں یہ فضائی کارروائی المنیا شہر میں قبطی عیسائیوں کی ایک بس پر نقاب پوش مسلح افراد کی فائرنگ کے ردعمل میں کررہا ہے۔دہشت گردی کے اس حملے میں انتیس قبطی عیسائی ہلاک ہوگئے تھے۔اس واقعے کے بعد مصری صدر عبدالفتاح السیسی نے ایک نشری تقریر میں کہا تھا کہ ان کا ملک دہشت گردی کے کیمپوں پر کسی بھی جگہ حملے سے نہیں ہچکچائے گا اور اندرون اور بیرون ملک انھیں نشانہ بنایا جائے گا۔

انھوں نے کہا کہ مصر کسی ملک کے خلاف سازش کا حصہ نہیں ہے اور وہ صرف اپنی قومی سلامتی کا مکمل تحفظ چاہتا ہے۔انھوں نے کسی خاص ملک کا تو نام نہیں لیا ہے۔البتہ ان کا کہنا تھا کہ لیبیا میں سنہ 2011ء میں معمر قذافی کی حکومت کے خاتمے کے بعد سے مصر اپنی سرحدوں پر کڑی نظر رکھے ہوئے ہے۔لیبیا کی قومی فوج کے سربراہ خلیفہ حفتر نے اتوار کے روز لیبیا کے مغربی اور جنوبی علاقوں سے تعلق رکھنے والے فوجی یونٹوں کوطرابلس میں انتہا پسندوں کے خلاف کارروائی کے لیے تیار رہنے کی ہدایت کی تھی

انڈونیشیا میں مذہبی رہنما پر فحاشی کا الزام، مقدمہ درج ،رزیق شہاب نے الزمات کی تردید کردی 

جکارتہ۔30مئی(فکروخبر/ذرائع)انڈونیشیا میں پولیس نے ایک متنازع مبلغ کو فحاشی کے الزام میں مرکزی ملزم نامزد کر دیا ہے۔رزیق شہاب پر الزام ہے کہ انھوں نے ایک عورت سے گفتگو کے دوران عریاں تصاویر اور فحش پیغامات کا تبادلہ کیا تھا۔ اس وقت سعودی عرب میں موجود رزیق شہاب نے ان الزامات کی تردید کی ہے۔رزیق شہاب انڈونیشیا میں اسلامک ڈیفینڈرز فرنٹ پارٹی)ایف پی آئی(کے سربراہ ہیں جس نے جکارتہ کے سابق گورنر بسوکی تجھاجہ پرنام کے خلاف توہین مذہب کرنے کی وجہ سے پر زور احتجاج اور مظاہرے کیے تھے۔مئی کے آغاز میں 'آہوک' کے نام سے مشہور گورنر پرناما پر اس متنازع مقدمے میں توہین مذہب کا الزام ثابت ہونے پر دو برس قید کی سزا سنائی گئی تھی۔رزیق شہاب اپنی دھواں دھار تقاریر کے لیے مشہور ہیں اور ماضی میں دو دفعہ ان کو تشدد اور امن و امان کی صورتحال خراب کرنے کے الزام میں جیل ہو چکی ہے۔حالیہ مقدمے میں رزیق شہاب پر الزام ہے کہ انھوں نے انڈونیشیا میں فحاشی پر پابندی کے لیے بنائے گئے سخت قوانین کی خلاف ورزی کی ہے اور فرزا حسین نامی ایک سماجی کارکن کے ساتھ فحش مواد کا تبادلہ کیا ہے۔اس کیس میں فرزا حسین کو بھی نامزد کیا گیا ہے۔دونوں کے درمیان بھیجے گئے پیغامات کے سکرین شاٹس اس سال کے آغاز سے انٹرنیٹ پر موجود ہیں۔پولیس نے رزیق شہاب کو اپریل سے تفتیش کی غرض سے طلب کیا لیکن وہ ابھی تک پولیس کے سامنے پیش نہیں ہوئے ہیں اور اپنے خاندان والوں کے ساتھ اس وقت سعودی عرب میں موجود ہیں۔

جسٹن ٹروڈو کا پوپ فرانسس سے معافی کا مطالبہ

کیتھولک چرچ کی جانب معافی 'متاثرین کے زخم بھرنے' میں مددگار ثابت ہوگی،وزیراعظم کنیڈا

اوٹاوا۔30مئی(فکروخبر/ذرائع)کینیڈا کے وزیر اعظم جسٹن ٹروڈو نے اپنے دورہ ویٹیکن کے دوران پوپ فرانسس سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ کینیڈا کے سکولوں میں مقامی (انڈی جینس)بچوں کے ساتھ کئی دہائیوں تک کیتھولک چرچ کی جانب سے کئے جانے والے استحصال پر معافی مانگیں۔'میں نے پوپ فرانسس کو بتایا کہ کینیڈا کیلئے یہ کتنا اہم ہے کہ ہم اس معاملے میں آگے بڑھیں اور مقامی لوگوں سے مصالحت کر سکیں اور اس کیلئے چرچ کی جانب سے معافی مانگنا کس قدر فائدہ مند ہو سکتا ہے۔جسٹن ٹروڈو نے مزید کہا کہ انھوں نے پوپ فرانسس کو کینیڈا آنے کی دعوت دی ہے تاکہ وہ معافی وہاں مانگ سکیں۔کینیڈا میں کیتھولک چرچ کی جانب سے 1880 کی دہائی میں کئی سکول قائم کئے گئے تھے جہاں مقامی بچوں کو مرکزی دھارے میں لانے کیلئے تعلیم و تربیت دی جاتی تھی۔ 1996تک یہ سکول ختم کر دیئے گئے تھے۔ڈیڑھ لاکھ سے زائد مقامی بچوں کو ان کے خاندانوں سے الگ کر کے چرچ کے تحت چلنے والے سکولوں میں داخلہ دیا گیا تھا جہاں ان بچوں پر اپنی مادری زبان بولنے پر اور اپنی ثقافت اور روایات پر عمل کرنے پر پابندی عائد کی گئی تھی۔کینیڈا کے ٹرتھ اینڈ ری کنسیلی ایشن کمیشن (سچ اور مفاہمت کمیشن)نے بھی کہا ہے کہ کیتھولک چرچ کی جانب معافی 'متاثرین کے زخم بھرنے' میں مددگار ثابت ہوگی۔ویٹیکن کی جانب سے کینیڈا کے مطالبے کا تو کوئی جواب نہیں آیا ہے لیکن ان کی جانب سے جاری کئے گئے بیان میں کہا گیا ہے کہ دونوں رہنماؤں کی ملاقات 'خوشگوار' تھی جو کہ 36منٹ تک جاری رہی تھی۔ویٹیکن کے اعلامیہ کے مطابق 'گفتگو کا محور مفاہمت کے بارے میں تھا اور ساتھ ساتھ مذہبی آزادی اور موجودہ اخلاقی معاملات پر بھی بات چیت ہوئی۔' لیکن اس بیان میں معافی کے بارے میں کوئی ذکر نہیں تھا۔ماضی میں عیسائی مذہب کے وہ مختلف فرقے جنھوں نے ان سکولوں کو چلانے میں کیتھولک چرچ کی مدد کی تھی، معافی طلب کر چکے ہیں۔سال 2008 میں کینیڈا کے اس وقت کے وزیر اعظم سٹیفن ہارپر نے بھی اپنے ملک کی جانب سے مقامی لوگوں سے معافی مانگی تھی اور اس واقعہ کو 'ملک کی تاریخ کا ایک افسوس ناک باب' قرار دیا تھا۔جسٹن ٹروڈو نے اپنے دورے میں پوپ فرانسس سے ماحولیاتی تبدیلی کے بارے میں بھی گفتگو کی اور اس کے علاوہ انھوں نے اٹلی کے صدر اور وزیر اعظم سے بھی ملاقات کی۔

الجزائر کے سابق وزیر نے بیوی کو گولیاں مار کر زخمی کردیا

سابق وزیر کی اہلیہ کو جسم کے مختلف حصوں پر تین گولیاں لگیں ہیں ،

الجزائرشہر۔30مئی(فکروخبر/ذرائع)الجزائر کے سابق وزیر برائے مذہبی امورو اوقاف نے اپنی اہلیہ کو گولیاں مار کے زخمی کر دیا ۔ العربیہ کے مطابق افریقی عرب ملک الجزائر کے سابق وزیر عبدالحفیظ امقران نے اپنی اہلیہ کو گولیاں مار دیں جس کے نتیجے میں وہ زخمی ہوگئیں۔واقعہ دارالحکومت کے مغرب میں بزرالدہ کے مقام پر سابق وزیر امقران کی رہائش گاہ پر پیش آیا۔پولیس حکام کے مطابق سابق وزیر کی اہلیہ کو جسم کے مختلف حصوں پر تین گولیاں لگیں جس کے بعد وہ خود ہی چل کر ہسپتال پہنچیں جہاں اس وقت بھی ڈاکٹر انکے علاج میں مصروف ہیں اور انکی حالت خطرے سے باہر ہے۔واقعے کے بعد سابق وزیر عبدالحفیظ امقران کو مقامی پولیس تھانے بلایا گیا جہاں ان سے فائرنگ کے واقعے کے بارے میں پوچھ گچھ کی گئی ہے تاہم ابھی تک یہ پتہ نہیں چل سکا کہ انہوں نے اپنی اہلیہ پر پستول کیوں اٹھایا ہے ۔

مانچسٹرحملہ،زخموں پر مرہم رکھنے والا پاکستانی سرجن نفرت انگیز رویے کا نشانہ بن گیا

نسلی بنیاد پر تعصب کامظاہرہ مانچسٹرکا رویہ نہیں ، ہم آہنگی کے ذریعے اسے ختم کر دیا جائیگا،پاکستانی سرجن

مانچسٹر۔30مئی(فکروخبر/ذرائع)مانچسٹرحملے کے بعد زخموں پرمرہم رکھنے والا پاکستانی ہیرو خود نفرت انگیز رویے کانشانہ بن گیا،37 برس کے نوید یاسین پاکستانی نژاد سرجن ہیں ، مانچسٹرحملے کے بعد مسلسل 48 گھنٹے زخمیوں کی دیکھ بھال میں مصروف رہے ۔ گھرسے ہسپتال جاتے ہوئے انہیں ایک سفید فام شخص نے روکنے کی کوشش کی ، برا بھلا کہا اور دہشتگرد کا لفظ استعمال کرتے ہوئے گاڑی کا ہارن بجا بجا کر چلاتا رہا کہ اپنے ملک واپس جاؤ ۔برطانوی میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے ڈاکٹر نوید یاسین نے کہا کہ نسلی بنیاد پر تعصب کامظاہرہ مانچسٹرکا رویہ نہیں ، ہم آہنگی کے ذریعے اسے ختم کر دیا جائیگا۔

امریکانے خواتین کو ہراساں کرنے سے روکنے پر قتل کئے جانے والے 2افراد کو خراج عقیدت پیش کیا

واشنگٹن۔30مئی(فکروخبر/ذرائع)امریکی ریاست اوریگون کے شہرپورٹ لینڈ میں دوخواتین کو ہراساں کرنے سے روکنے پر قتل کیے گئے2 افراد کو خراج عقیدت پیش کیا گیا ۔پورٹ لینڈ میں ایک ریل گاڑی میں دوخواتین کو بچانے والے رکی جان بیسٹ ،تلیسن ماردین نمکائی اورمیکا ڈیوڈ فلوچرکوہیروقراردیا جارہاہے ۔انہوں نے خواتین پر جملے کسنے والے شخص جیرمی کرسچین کو روکنے کی کوشش کی تو اس نے ان پرچاقوسے حملہ کرکے دوکو ہلاک اورایک کو زخمی کردیا ۔پورٹ لینڈ میں ان بہادرافراد کو خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے مختلف تقریبات کا انعقاد کیا جارہا ہے۔ ایک تنظیم کی جانب سے منعقدہ تقریب میں ایک ہزارافراد اکٹھے ہوئے ۔ مرنے والوں کی یاد میں شمعیں جلائی گئیں اورگلدستے رکھے گئے ۔مسلم ایجوکیشنل ٹرسٹ کے تحت تقریب میں بھی سیکڑوں افراد نے شرکت کی ۔امریکی ٹی وی سے گفتگو میں ناروا سلوک جھیلنے والی غیرمسلم لڑکی مینگم نے بتایا کہ وہ اپنی حجاب پہنی مسلم دوست کے ساتھ سفرکررہی تھی کہ ایک شخص نے ان پرجملے کسے اورہراساں کیا جس پرتین مسافروں نے اسے روکا تو ملزم نے ان پرحملہ کردیا۔حملہ آورجیرمی کرسچین کو گرفتارکرلیا گیا تھا جس کے خلاف قتل عمد ، قاتلانہ حملے ، ہراساں کرنے، بداخلاقی کا مظاہرہ کرنے اور ممنوعہ ہتھیار رکھنے کے الزامات عائد کیے گئے ہیں۔ملزم پر آج فردِ جرم عائد کی جائے گی ۔

پاناما کے سابق آمر مینوئل انٹونیو نوریگا 83 برس کی عمر میں انتقال کر گئے

پاناما سٹی۔30مئی(فکروخبر/ذرائع)پاناما کے سابق آمر مینوئل انٹونیو نوریگا 83 برس کی عمر میں انتقال کر گئے ہیں۔ غیر ملکی خبررساں ادارے کے مطابق پاناما حکام کی جناب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ مارچ میں نوریگا کے دماغ میں ایک رسولی کا آپریشن ہوا۔ وہ اس کے علاوہ بھی وہ کئی دیگر بیماریوں کا شکار تھے۔ انہوں نے 1983ء سے لے کر 1989ء تک پاناما پر حکومت کی ۔ وہ کئی طرح کے انسانیت سوز جرائم کے الزامات کے تحت سزا کاٹ رہے تھے تاہم جنوری میں طبی بنیادوں پر ان کی سزا کم کر کے انہیں رہا کر دیا گیا تھا۔ دسمبر 1989ء میں ملکی فوج نے ان کی حکومت کا تختہ الٹ دیا تھا، جس کے بعد وہ فرار ہو کر امریکا چلے گئے تھے۔

جرمن وزیر خارجہ نے مضبوط یورپ بارے انجیلا مرکل کے موقف کی حما یت کر دی

برلن۔۔30مئی(فکروخبر/ذرائع)جرمنی کے وفاقی وزیر خارجہ زیگمار گیبریئل نے بھی ایک مضبوط یورپ کی خواہش کا اظہار کیا ہے۔ غیر ملکی خبررساں ادارے کے مطابق گیبریئل نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ یورپ کو مستحکم بنانے کی کوششوں کا مطلب مشترکہ یورپی تصورات، جمہوریت، آزادی اظہار اور بین الاقوامی قوانین کے احترام کو مضبوط بنانا ہے نہ کہ طاقت ور کے حق کا تحفظ کرنا۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے حالیہ دورہء یورپ کے تناظر میں گیبریئل نے مزید کہا کہ امریکا ان نظریات سے دور ہوتا جا رہا ہے۔ اس سے قبل جرمن چانسلر انجیلا مرکل نے بھی کہا تھا کہ امریکا اور برطانیہ اب یورپ کے قابل اعتماد ساتھی نہیں رہے۔

تنازعات کے حل کے لیے لائحہ عمل تیار کیا جائے گا،روس اور فرانس کے صدور کی ملاقات میں اتفاق

ماسکو ۔30مئی(فکروخبر/ذرائع)روسی صدر ولادیمیر پیوٹن اور فرانسیسی سربراہ مملکت ایمانویل ماک غوں نے یوکرین اور شام کے تنازعات کو حل کرنے کے لیے مشترکہ کوششوں پر رضامندی ظاہر کی ہے۔غیر ملکی خبررساں ادارے کے مطابق وَیرسائے پیلس میں ہونے والی ایک ملاقات میں دونوں صدور نے بین الاقوامی سطح پر پائے جانے والے اختلافات کو نظر انداز کرتے ہوئے ان تنازعات کو حل کرنے کے لیے ایک مضبوط لائحہ عمل اختیار کرنے پر زور دیا ہے۔ ماک غوں اس سے قبل فرانس کے صدارتی انتخابات میں روسی مداخلت کی بات کر چکے تھے۔ تاہم اس موقع پر اس حوالے سے کوئی بیان سامنے نہیں آیا۔