dushwari

فرانسیسی صدر ماکروں کی غیرا علانیہ دورے پر سعودی عرب آمد، ولی عہد سے ملاقات

ریاض پر حوثیوں کا بیلسٹک میزائل حملہ قابل مذمت ہے،ماکروں

ریاض ۔10نومبر( یو این این) فرانسیسی صدر عمانو ایل ماکروں متحدہ عرب امارات کا دورہ مکمل کرنے کے بعد غیر علانیہ طور پر سعودی عرب پہنچ گئے جہاں انہوں نے سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان سے ملاقات کی۔ سعودی پریس ایجنسی کے مطابق شہزادہ محمد نے فرانسیسی مہمان صدر کو ہوائی اڈے پر خوش آمدید کہا۔صدر ماکروں نے بتایا کہ انہوں نے یمن کے حوثیوں کی جانب سعودی دارلحکومت ریاض کو نشانہ بنانے کی اطلاعات اور ایران سے متعلق معاملات پر تبادلہ خیال کے لئے جمعرات کی صبح ہی سعودی عرب آنے کا پروگرام بنایا۔

انھوں نے حملے کا ذمہ دار ایران کو قرار دیتے ہوئے کہا اگرچہ میں نے 2015ء4 کو تہران اور عالمی طاقتوں کے درمیان طے پانے والے نیوکلیئر معاہدے کی حمایت کی تھی لیکن اب میں سمجھتا ہوں کہ ایران کے میزائل پروگرام سے متعلق ایک نیا معاہدہ کیا جانا چاہئے۔دبئی میں فرانسیسی سکول میں نیوز کانفرنس کے موقع پر مسٹر ماکروں نے بتایا کہ یمن سے دارلحکومت ریاض پر داغا جانے والا میزائل بادی النظر میں ایرانی تھا، جس سے ان کے [میزائل] پروگرام کی طاقت کا اندازہ لگایا جا سکتا ہے۔ا س داغا جانے والا بیلسٹک میزائل ریاض کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کے قریب سعودی ایئر ڈیفنس نے مار گرایا تھا۔ پیر کی صبح سعودی عرب نے ایران کو خبردار کیا تھا کہ میزائل حملے کو ‘جنگی اقدام سمجھا جا سکتا ہے’۔فرانسیسی صدر نے کہا کہ میں سمجھتا ہوں کہ خطے کے استحکام کو یقینی بنانے اور دہشت گردی کے خلاف جنگ میں ہم سعودی عرب کے ساتھ مل کر کام کریں۔