Print this page

قطری کابینہ میں رد وبدل ، نئے وزیرخارجہ کا تقرر

دوحہ ۔28جنوری (فکروخبر/ذرائع)امیر قطر شیخ تمیم بن حمد آل ثانی نے بدھ کے روز ایک حکم نامے کے ذریعے اپنی کابینہ میں ؛ردوبدل کیا ہے اور انھوں نے وزارت خارجہ کا قلم دان محمد بن عبدالرحمان آل ثانی کو سونپا ہے۔قطر کی سرکاری خبررساں ایجنسی کیو این اے کے مطابق وزیر خارجہ خالد العطیہ کو تبدیل کردیا گیا ہے اور انھیں اب وزیر مملکت برائے دفاع مقرر کیا گیا ہے۔امیر قطر شیخ تمیم خود وزیردفاع ہیں۔خزانے اور توانائی کے وزراء کو ان کے مناصب پر برقرار رکھا گیا ہے جبکہ وزیر صحت کو بھی تبدیل کردیا گیا ہے۔

امیر قطر نے اپنے حکم نامے کے ذریعے متعدد وزارتوں کو ایک دوسرے میں ضم کردیا ہے۔مواصلات اور ٹرانسپورٹ کی ایک وزارت بنا دی گئی ہے اور ثقافت ،امورنوجواناں اور کھیلوں کی وزارت کو بھی ایک بنا دیا گیا ہے۔


سعودی عرب نے60 ملین ڈالر فلسطینی اتھارٹی کے اکاؤنٹ میں منتقل کردیئے

ریاض ۔28جنوری (فکروخبر/ذرائع)سعودی عرب نے60 ملین ڈالر فلسطینی اتھارٹی کی وزارت خزانہ کے اکاونٹ میں منتقل کردیئے۔ یہ رقم سعودی عرب کے ترقیاتی فنڈ سے جاری کی گئی ہے۔ عرب لیگ سیکرٹریٹ کے ترجمان کے مطابق یہ رقم سعودی عرب کی جانب سے ہر سہ ماہی میں فلسطینی اتھارٹی کے اکاونٹ میں جمع کرا ئی جاتی ہے جس کا مقصد فلسطینی حکومت کی معاونت کرنا ہے۔


یواے ای میں داعش کے مقامی امیر کے خلاف مقدمے کی سماعت

ابوظہبی ۔28جنوری (فکروخبر/ذرائع) متحدہ عرب امارات میں داعش کے مقامی امیر کے خلاف وفاقی عدالتِ عظمیٰ میں مقدمے کی سماعت شروع ہوگئی ہے۔اس پر اماراتی پر دارالحکومت ابوظبی میں فارمولا 1 سرکٹ سمیت مختلف اہداف پر حملوں کی سازش کا الزام ہے۔استغاثہ کے ایک گواہ نے عدالت کو بتایا ہے کہ اس اماراتی شخص اور اس کی بیوی نے سوشل میڈیا کے ذریعے داعش کے خلیفہ ابو بکرالبغدادی کی بیعت کی تھی۔ اس گواہ نے مزید بتایا کہ اس مدعا علیہ کے کمپیوٹر میں ابوبکر البغدادی اور عراق میں القاعدہ کے سابق سربراہ ابو مصعب الزرقاوی کی تقاریر موجود تھیں اور وہ ان کو نوجوانوں کو اپنے نظریے سے متعارف کرانے اور بھرتی کرنے کے لیے استعمال کیا کرتا تھا۔یادرہے کہ اس اماراتی شخص کی بیوی علاء بدرالہاشمی نے امریکی اسکول ٹیچر آئیبولیا ریان کو دسمبر 2014ء میں ابوظہبی شاپنگ مال کے ایک واش روم میں چاقو کے پے درپے وار کرکے قتل کردیا تھا۔قاتلہ کو عدالت نے قصور وار قرار دے کر سزائے موت سنائی تھی اور اس کو گذشتہ سال جولائی میں موت کے گھاٹ اتار دیا گیا تھا۔اس ملزم نے ''میڈیا بٹالین'' کے نام سے ایک ویب سائٹ بھی بنا رکھی تھی اور اس کے ذریعے دہشت گرد تنظیموں کے دہشت گردی کے نظریے کی تشہیر کی جاتی تھی۔ایک اور گواہ نے عدالت میں بیان دیتے ہوئے بتایا ہے کہ مدعا علیہ کے کمپیوٹرز میں ایسے سوفٹ وئیر بھی انسٹال تھے جہاں لاگ ان ہونے والوں کو دھماکا خیز بنانے اور شاپنگ مال ،فوجی تنصیبات پر حملوں اور کسی لیڈر کو قتل کرنے کے طریقے سکھائے جاتے تھے۔