dushwari

تازہ ترین خبر:

شیموگہ:آلودہ پانی کے استعمال سے دو لوگوں کی موت ،45افراد بیمار

شیموگہ : 12؍فروری2018(فکروخبرنیوز)بدراوتی کے میدولالو گاؤں کے رہنے والے دو افراد کی آلودہ پانی پینے سے موت واقع ہونے کے حادثہ کے بعد علاقہ والوں نے گرام پنچایت کے ذمہ داروں پر لاپرواہی کا الزام عائد کرتے ہوئے اس معاملہ کی صحیح جانچ اور متاثرین کیلئے معاوضہ کا مطالبہ کیا ہے ،یہ پانی گرام پنچایت کیے زیر نگرانی پورے گاؤں میں تقسیم کیا جاتا رہاہے ،جبکہ اسی پانی کے اثر سے گاؤں کے 45سے زائد لوگ بھی بیمار پڑ گئے ، جن کا علاج نجی اسپتال میں جار ی ہے ،
ذرائع کے مطابق شوپا ہنومنتھپا اور سدما کو شیموگہ کے میگان اسپتال میں اس وقت بھرتی کیا گیاجب وہ گرام پنچایت کی طرف سے نلکے کے ذریعہ فراہم کردہ پینے والا پانی استعمال کرنے کے بعد بیمار ہوگئے ، اتوار کے روز علاج کارگر نہ ہونے کی بناء پر ان میں سے دو کی اسپتال میں ہی موت واقع ہو گئی ، جبکہ علاقہ کے 45افراداب بھی نجی اسپتالوں میں زیر علاج ہیں ،جن میں سے 12کی حالت مزید بگڑتی دیکھ انہیں بھی شیموگہ کے میگان اور سبیا اسپتال میں بھرتی کرایا گیا ہے ،جن کی حالت نازک بنی ہوئی ہے ، ان اموات اور لوگوں کے بیمارہونے جانے کی خبر کے ساتھ ہی گرام پنچایت کے ذمہ داروں نے علاقہ والوں کو پینیس ے قبل پانی ابالنے کا مشورہ دیا ہے ،وہیں ضلع ہیلتھ آفسر ڈاکٹر ہنومنتھپا نے گرام پنچایت کے ذمہ داروں کو اوپری ٹینک کی صفائی کی ہدایت کی ہے جہاں سے پانی لوگوں کو فراہم کیا جا تاہے ، اس واقعہ کے بعد گاؤں والوں نے گرام پنچایت کے ذمہ داروں کی لاپرواہی کو اس حادثہ کی وجہ بتایاہے ان کا کہنا ہے کہ یہ واقعہ گرام پنچایت کے ذمہ داروں کی لاپرواہی کا نتیجہ ہے ،جنہوں نے ایک سال سے زیادہ عرصہ گزرنے کے باوجود بھی پانی کے ٹینک کو صاف نہیں کروایا ،انہوں نے اس معاملہ میں سخت جانچ اور متاثرین کے لئے معاوضہ کا مطالبہ کیا ہے ،پانی کے نمونہ کو جانچ کے لئے لیبورٹری بھیج دیا گیا ،معاملہ کی تحقیقات جاری ہے

Urdu-Arabic-Keybaord11

ISLAMIC-MESSAGES