dushwari

بی جے پی صدر امت شاہ نے ریاستی سرکار پر سادھا نشانہ ، سدارمیا حکومت کو بتایا ہندو مخالف

چترادرگ :11؍جنوری2018(فکروخبر/ذرائع): بی جے پی کے قومی صدر امیت شاہ نے کرناٹک اسمبلی انتخابات کے لئے بگل بجادیا ہے ۔ انہوں نے الزام لگایا کہ کرناٹک کے وزیراعلی سدارامیا کی حکومت ہندو مخالف ہے۔ انہو ں نے چترادرگ میں نواکرناٹک نرمان پریورتن یاترا سے خطاب کرتے ہوئے کہا سدارامیا حکومت ووٹ بینک کی سیاست میں ملوث ہے یہ مخالف ہند حکومت ہے جس نے ایس ڈی پی آئی کے خلاف تمام معاملات سے دستبرداری اختیار کی ہے جو مخالف ہند تنظیم ہے ۔

ریاستی حکومت نے انتہاپسندانہ خیالات کی حامل پی ایف آئی کے تمام مجرمین کے خلاف تمام معاملات سے دستبرداری اختیار کی ہے۔ مندروں کے پجاریوں کی تنخواہیں چار ماہ سے روک لی گئی ہیں۔ انہوں نے ریاست سے کانگریس حکومت کو اکھاڑ پھینکنے کا عزم کیا۔ انہو ں نے سست رفتار ترقی اور کرپشن میں ا ضافہ کا بھی الزام لگایا۔ امیت شاہ نے دعوی کیا کہ مودی حکومت نے کرناٹک کے لئے 2,19,000کروڑ روپے الاٹ کئے تھے ۔ انہوں نے ریاستی کانگریس حکومت کے تحت رقم پر سوال اٹھائے۔ امیت شاہ نے کہا کہ ریاست کی سدارامیا حکومت نے فلاح و بہبود کی رقم کے فائدوں سے ریاست کے عوام کو محروم کردیا ہے۔ مودی حکومت نے تیرہویں فائنانس کمیشن کے کرناٹک کے حصہ 88,583کروڑ کو 14ویں فائنانس کمیشن نے 2,19,500 کروڑ روپے کردیا ہے۔انہوں نے کہا کہ 14ویں فائنانس کمیشن کے تحت دی گئی رقم کہاں گئی؟ یہ رقم مرکز نے دی تھی کیا یہ آپ کے گاوں تک پہنچی؟ مودی حکومت کی جانب سے کرناٹک کی ترقی کے لئے منظور کی گئی رقم کہاں گئی ؟ آپ کے گاوں کے کانگریسی لیڈر کو دیکھئے ؟ 5سال پہلے وہ گھاس پھوس کے مکان میں رہا کرتے تھے اور اب وہ4منزلہ مکان میں رہتے ہیں جہاں عالیشان کار ٹہری ہوتی ہے ۔ کرناٹک میں کانگریس کے حکومت بنانے کے بعد سے یہاں کی ترقی رک گئی ہے ۔ میں وزیراعلی کے اس سوال کا جواب دینے کے لئے یہاں آیا ہوں کہ مرکز نے کرناٹک کے لئے کیا کیا؟ یہ حکومت ووٹ بینک کی سیاست کررہی ہے۔امیت شاہ نے وزیراعظم نریندر مودی کی اجول یوجنا کی بھی ستائش کی اور کہا کہ مرکز نے کرناٹک کی 3.33لاکھ غریب خواتین کو مفت ایل پی جی کنکشنس فراہم کئے ہیں۔ امیت شاہ نے شمالی اور جنوبی کرناٹک کے پارٹی کے وفود سے بھی تبادلہ خیال کیا۔

Urdu-Arabic-Keybaord11

ISLAMIC-MESSAGES