dushwari

ای وی ایم کے ذریعہ ہونے والی ووٹنگ عوام کے ساتھ فریب :ڈاکٹر منظور عالم

نئی دہلی:05؍ڈسمبر20127(فکروخبر/ذرائع)ای وی ایم مشینوں پر اٹھنے والا اعتراض دن بہ دن قوی ہوتاجارہا ہے اور آئے دن ایسے ثبوت وشواہد سامنے آرہے ہیں جو بتاتے ہیں کہ ای وی ایم مشینوں میں گڑبڑی کی جا رہی ہے ۔ جمہوریت کا گلا گھونٹا جارہاہے اور عوام کا ووٹ غلط جگہ جارہا ہے ،ان خیالات کا اظہار ایک پریس نوٹ میں ملک کی موقر تنظیم آل انڈیا ملی کونسل کے جنرل سکریٹری ڈاکٹر منظور عالم نے کیا۔ انہوں نے کہا کہ یوپی سمیت کئی ریاستوں کے انتخابی نتائج پر اس طرح کے سوالات اٹھے ہیں،عام آدمی پارٹی کے ایک رکن نے سرعام یہ ثابت بھی کردیا تھا کہ مشین ہیک کی جاسکتی ہے اور انہوں نے کرکے بتایاتھا۔

اب اتر پردیش میں بلدیاتی الیکشن کے نتائج نے ان اعتراضات کو بالکل پختہ کردیا ہے ۔انہوں نے کہا کہ یہ بات اتفاقی نہیں ہوسکتی ہے کہ یوپی میں جہاں بیلٹ پیپرس کا استعمال ہوا ہے وہاں بی جے پی کو صرف 15 سیٹوں پر جیت ملی ہے جبکہ اس کے برعکس جہاں ای وی ایم مشینوں سے ووٹنگ ہوئی ہے وہاں 46 سیٹوں پر بی جے پی کو جیت ملی ہے۔ وہیں، کچھ امیدوار کو ایک بھی ووٹ نہیں ملے ہیں جب کہ ان کا دعوی ہے کہ 300 کے قریب صرف ہماری فیملی کا ووٹ ہے ۔ڈاکٹر منظور عالم نے کہا کہ ای وی ایم کے ذریعہ ہونے والی ووٹنگ جمہوریت کےلئے سم قاتل اور عوام کے ساتھ فریب ہے ،اس طریقہ انتخاب سے عوام کی رائے کا گلا گھونٹا جا رہا ہے۔ عوام جنہیں اپنا رہنما منتخب کرنا چاہتی ہے ان کے بجائے کوئی اور زبردستی ان کا لیڈر منتخب ہورہا ہے اور اسے انتخاب کا جمہوری طریقہ نہیں کہاجاسکتا ہے ،انہوں نے کہاکہ ای وی ایم میں گڑبڑی کی شکایتیں بہت قوی ہوتی جارہی ہیں،ملک کی اہم سیاسی پارٹیوں ،سماجی تنظیم اور متعدد اہم شخصیات کا مطالبہ ہے کہ ای وی ایم انتخاب کیلئے محفوظ طریقہ نہیں ہے ،اس کی جگہ بیلیٹ پیپرس کا استعمال کیا جائے تو الیکشن کمیشن کو چاہیئے کہ وہ ان امور پر خاص توجہ دے اور ای وی ایم کے استعمال کو بند کرے ۔

Urdu-Arabic-Keybaord11

ISLAMIC-MESSAGES