dushwari

داعش سے جڑے رہنے کا الزام : 19 مشتبہ نوجوانوں کو کرلیا گیا گرفتار(مزید اہم ترین خبریں)

قومی تحقیقاتی ایجنسی کا سوشیل میڈیا پر سخت پہرہ

نئی دہلی۔ 24 جنوری (فکروخبر/ذرائع) قومی تحقیقاتی ایجنسی یعنی این آئی اے نے ملک کے مختلف حصوں سے 19 مشتبہ افرادکو گرفتار کیا ہے۔ جن پر یوم جمہوریہ سے قبل حملہ کرنے کیلئے منصوبہ بنانے کا الزام ہے۔ این آئی اے نے مشتبہ دہشت گرد گروپ کے خلاف مسلسل کارروائی کرتے ہوئے کئی خفیہ جانکاری حاصل کی۔ امریکی سیکورٹی ایجنسی سی آئی اے نے دہشت گردوں کے درمیان ایک محاوراتی بات چیت 7کلش رکھ دو کا مطلب ڈھونڈا تھا۔یہ کوڈ یوم جمہوریہ کے موقع پر سات مقامات کو بم سے اڑانے کی ساز ش کی تشریح تھی۔اس چیز کو سی آئی اے نے ہندوستانی ایجنسیوں کے ساتھ شیئر کیا تھا اور فکر مند سیکورٹی حکام نے قومی سلامتی مشیر اجیت ڈووال کو آگا ہ کیا۔

امریکی انٹلیجنس ایجنسی سی آئی اے شام اورعراق میں داعش کی جانب سے استعمال کئے جانے والا کمپیوٹر اور اسمارٹ فونز کے سینکڑوں آئی پی ایڈریس پر نگرانی رکھی ہوئی ہے۔دہشت گرد تنظیم داعش ملک گیر سطح پر اپنے کارکنوں سے رابطہ رکھنے کے لئے متعدد آئی پی ایڈریس استعمال کررہی ہے اور اس طرح کے تمام پراکسی سرور ایڈریس سرولینس پر ڈال دیا گیا ہے۔ ایک سے زائد آئی پی ایڈریس آئی ایس کمانڈر شفی ارمان ہندوستان میں آئی ایس کارکنوں سے بات چیت کرنے کے لئے استعمال کررہا ہے۔داعش سے منسلک متعدد افرادسمیت اخلاق کو ہری دوار اور اتراکھنڈ سے گرفتار کیا گیا ہے۔قابل ذکرہے کہ قومی تحقیقاتی ایجنسی این آئی اے ریاستی پولیس فورس کے ساتھ ملک کے مختلف مقامات پر چھاپے ماری کرکے 19 مشتبہ افراد کو اٹھالیا ہے۔ 


ریزرویشن کے لئے میرے جیسے لیڈر ذمہ دار: سمترامہاجن 

نئی دہلی۔ 24 جنوری (فکروخبر/ذرائع) لوک سبھا اسپیکر اور سینئر بی جے پی لیڈر سمترا مہاجن ریزرویشن پر تبصرہ کرتے ہوئے ریزرویشن کے لئے رہنماؤں کو ذمہ دار قرار دیا۔ لوک سبھا اسپیکر کے مطابق ملک میں 60 سال بعد بھی نسل پرستی پر قابو نہیں پایا جا سکا ہے۔احمد آباد میں اسمارٹ سٹیز پرہوئے پروگرام میں خطاب کرتے ہوئے سمترا مہاجن نے کہاکہ جن کے لئے ریزرویشن دیا گیا تھا ان کیتجدید کاری اب تک نہیں ہوئی ۔ یہ تشویش کی بات ہے۔اس کے لئے شاید میرے جیسے لیڈر ہی ذمہ دار ہیں۔مہاجن نے مزید کہاکہ امبیڈکر جی نے کہا تھاکہ ریزویشن 10 سال کے لئے کیا جانا چاہئے۔ اس کے بعد اس کا جائزہ ہونا چاہئے۔پسماندہ لوگوں کو اس سطح پر لانا چاہئے۔ ہم نے ایسا کچھ نہیں کیا۔ ہم نے کبھی اس بات پر توجہ نہیں دی اور نہ ہی اس کاجائزہ لیا۔


حیدر آباد یونیورسٹی کے سات طلباء نے غیر معینہ مدت کیلئے بھوک ہڑتال شروع کردی

نئی دہلی ۔ 24 جنوری (فکروخبر/ذرائع) حیدرآباد میں نچلی ذات سے تعلق رکھنے والے پی ایچ ڈی کے طالب علم روہیت ویمولا کی خودکشی کے بعد حیدر آباد یونیورسٹی کے سات طلباء نے غیر معینہ مدت کیلئے بھوک ہڑتال شروع کردی۔ ذرائع ابلاغ کے مطابق چند روز قبل یونیورسٹی سے اخراج سے دلبرداشتہ ہو کر ایک دلت طالب علم نے خودکشی کی تھی جس پر ملک کے مختلف حصوں میں احتجاج کا سلسلہ جاری ہے۔ اس ضمن میں گزشتہ روز حیدرآباد یونیورسٹی کے 7 طالب علموں نے غیر معینہ مدت کیلئے بھوک ہڑتال شروع کردی ہے۔ بھوک ہڑتالی طلباء اس واقعہ کی مکمل تحقیقات کا مطالبہ کررہے ہیں۔ دوسری جانب سٹوڈنٹ جوائنٹ ایکشن کمیٹی نے بھی اس واقعہ کے خلاف (آج ) پیر کو مارچ کا اعلان کیا ہے۔ طلباء کے احتجاج کے تناظر میں سیکورٹی کے خصوصی انتظامات کئے گئے ہیں۔


یوم جمہوریہ کی آ مد، کشمیر سے کنیا کماری تک سخت سیکورٹی انتظامات 

سرینگر۔24جنوری (فکروخبر/ذرائع) کشمیر سے کنیا کماری تک 26 جنوری کی تقریبات احسن طریقے سے منعقد کرانے کیلئے سیکورٹی کے سخت انتظامات کئے جارہے ہیں ۔ اس دوران آج سرینگر اور وادی کے دیگر حساس قصبوں میں جگہ جگہ گاڑیوں کے ساتھ ساتھ عام راہگیروں کی تلاشی اور پوچھ تاچھ کا عمل جاری رہا ۔ نمائندے کے مطابق منگل کو منعقد ہونے والے یوم جمہوریہ کے موقعہ پر ممکنہ دہشت گردانہ کاروائی یا تشدد سے بروقت نمٹنے کیلئے راجدھانی دہلی کے علاوہ پارلیمنٹ ہاوس، لال قلعہ، عدالت عظمیٰ کے علاوہ مختلف شہروں میں قائم ہوائی اڈوں اور دیگر اہم سرکاری تنصیبات پر غیر معمولی سیکورٹی کے انتظامات کئے جارہے ہیں جبکہ دہلی کے انڈین گیٹ جہاں اس سلسلے میں قومی تقریب منعقد ہورہی ہے پر ہزاروں کی تعداد میں خصوصی فورسز کے علاوہ نیشنل سیکورٹی گارڈوں کو تعینات کیا جارہاہے اور انڈیا گیٹ کے گرد نواح میں دور دور تک لوگوں کی نقل و حرکت کی عکس بندی کرنے والے کیمروں کو نصب کیا گیا ہے۔ ادھر ریاست کے دونوں دارلحکومتوں میں سیکورٹی کے فیصد المثال انتظامات کئے جارہے ہیں۔ خفیہ اداروں نے انکشاف کیا ہے کہ گزشتہ کئی مہینوں سے سرینگر میں کوئی بھی بڑی عسکری کارروائی انجام نہیں دی گئی اور اس طویل عرصے کے دوران دہشت گردوں نے ممکنہ طور پر شہر سرینگر میں اپنے خفیہ ٹھکانے قائم کئے ہوں گے اور وہ اپنی موجودگی کا احساس دلانے کے لئے 26جنوری کے موقعہ پر اپنی موجودگی ظاہر کرنے کیلئے خاص طور پر سرینگر شہر میں کوئی بڑی دہشت گردانہ انجام دے سکتے ہیں جبکہ وادی کے دیگر حساس قصبوں میں دہشت گردانہ کاروائیوں کا بھی امکان ہے اور کسی بھی امکانی گڑ بڑ کو ناکام بنانے کیلئے سیکورٹی کے غیر معمولی انتظامات کے ساتھ ساتھ چیکنگ کا عمل بھی تیز کردیا گیا ہے ۔ چنانچہ اس خدشے کے پیش نظر فورسز کی مختلف ایجنسیوں نے تلاشتی کاروائیوں میں اچانک سرعت لاتے ہوئے مشکوک افراد کی تلاشی کے ساتھ ساتھ گاڑیوں اور مشکوک جگہوں کی تلاشی بھی تیز کردی ہے اس مقصد کیلئے پولیس ، ٹاسک فورس اور سراغ رساں اداروں کو متحرک کردیا گیا ۔ نمائندے کے مطابق جموں کے سیول سکریٹریٹ، ریلوئے اسٹیشن ، ائر پورٹ ، فلائی اوروں کے سا تھ ساتھ اہم سرکاری تنصیبات پر بھی اضافی فورس کے دستوں کا گشت تیز کردیا گیا جموں شہر کے مختلف مقامات پر آج گاڑیوں کے ساتھ ساتھ مشکوک راہگیروں کی تلاشی لی گئی اور سیکورٹی انتظامات کے حوالے سے تمام انتظامات کو حتمی شکل دی جارہی ہے ۔ دریں انثا سرینگر اور اس کے گرد نواح میں پولیس اور نیم فوجی دستوں نے کل بھی گاڑیوں کی چیکنگ اور راہ گیروں کی پوچھ تاچھ کا سلسلہ جاری رکھا جس کے دوران لوگوں کے شناختی کارڈ چیک کئے گئے جبکہ مصروف بازاروں میں گشت کے لئے عام کپڑوں میں ملبوس اہلکاروں کی تعیناتی بھی عمل میں لائی گئی ۔


چلہ کلان میں اس بار بھی برفباری اور بارشیں نہ ہوئیں 

مسلسل خشک موسم سے آنے والے زرعی و باغبانی سیزن پر منفی اثرات مرتب ہونے کا اندیشہ

سرینگر۔24جنوری (فکروخبر/ذرائع)وادی کشمیر میں چلہ کلان کے دوران موسم لگاتار خشک رہنے سے کسانوں اور باغ مالکان سخت تشویش میں مبتلاء ہوگئے ہیں ۔کسانوں اور باغ مالکان کا کہنا ہے کہ اگر چلہ کلان کے دوران موسم اسی طرح سے خشک رہا اور برفباری اور بارشیں نہ ہوئیں تو اس کا لازمی منفی اثر آنے والے زرعی سیزن پر پڑے گا اور اس طرح سے آنے والے ایام میں فصلوں کی پیداوار میں نہایت ہی نقصان واقع ہوگا ۔ محکمہ موسمیات کی جانب سے ملی تفصیلات کے مطابق گذشتہ کئی برسوں سے وادی کی موسمی صورتحال میں نمایاں تبدیلی واقع ہورہی ہے اور جاڑوں کے دوران مسلسل خشک موسم ایک تشویش ناک رخ اختیار کررہا ہے ۔اس دوران سرینگر سمیت وادی کے دیگر میدانی علاقوں میں دن کے درجہ حرارت میں بھی نمایاں اضافہ ہوا ہے ۔محکمہ موسمیات کے مطابق سرینگر کازیادہ سے زیادہ درجہ حرارت اب معمول کے برعکس 10ڈگری سے زیادہ درج ہورہا ہے جو کہ ایک غیر معمولی شئی ہے ۔محکمہ موسمیات نے اگلے ایک ہفتے تک موسم میں کوئی بھی تبدیلی کو خارج از امکان قرار دیا ہے اور پیش گوئی کی ہے کہ اگلے 6روز تک درجہ حرارت میں مسلسل اضافے کا امکان ہے ۔ماہرین موسمیات نے اس کی وجہ مغربی ہواؤں کے دباؤ میں خاصی کمی قرار دیا ہے۔اس دوران مسلسل خشک موسم کے باعث زرعی و باغبانی سیکٹر سے جڑے طبقوں میں بھی تشویش بڑھ گئی ہے ۔باغ مالکان کا کہنا ہے کہ اگر چلہ کلان کے دوران موسم اسی طرح خشک رہا تو اس کا لازمی اثر آنے والے باغبانی سیزن پر پڑے گا اور نتیجتاً فصلوں کی پیداوار اور ان کے ذائقے میں نمایاں تبدیلی واقع ہوگی جوکہ وادی کی میوہ صنعت کیلئے نیک شگون نہیں ہے ۔ محمد اسلم نامی باغ مالک کا کہنا ہے کہ گذشتہ برس بھی چلہ کلان کے دوران اسی طرح سے موسم خشک رہا تھا اور اسکے بعد باغات کی میوہ پیداوار متاثر ہوئی تھی ۔اس صورتحال کی وجہ سے کشمیر کی میوہ صنعت بری طرح متاثر ہورہی ہے ۔یہ بات قابل ذکر ہے کہ ماہرین موسمیات نے یہان موسمی تغیر کو عالمی گلوبل وارمنگ کے نتیجے سے جوڑا ہے ۔ماہرین کا کہنا ہے کہ موسمی حالات میں سدھار مقامی سطح پر بڑے اقدامات جن میں جنگلات کا پھیلاؤ ،ندی نالوں اور آبی ذخائر کا تحفظ شامل ہے ،کرنے ضروری ہیں اور جب تک سرکاری سطح پر بڑے بڑے ماحولیاتی پروجیکٹ ہاتھ میں نہیں لئے جاتے تب تک کشمیر کے موسمی حالات میں خطرناک تبدیلی کو روکا نہیں جاسکتا ہے ۔


شہرمیں اوورلوڈنگ کے نام پر بجلی تخفیف بندکرنے کامطالبہ 

کانپور۔24جنوری (فکروخبر/ذرائع) رام پور کے سینئرسماجی کارکن حکیم نزاکت علی نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ موجودہ وقت میں اوورلوڈنگ کے نام پر شہری علاقوں میں اندھادھند بجلی کٹوتی کی جارہی ہے دن ہو یارات کسی بھی وقت کئی کئی گھنٹوں کیلئے بجلی بندکردی جاتی ہے ۔ اس کے متعلق شہری علاقہ کے بجلی محکمہ جونیئر انجینئروں سے فون پر رابطہ قائم کرکے معلومات کی جاتی ہے تو یہ نکمہ افسران فون تک اٹھانے کو تیار نہیں ہوتے مجبوراً پھر فون بجلی محکمہ کے سپرنٹنڈنگ انجینئر سے رابطہ کرکے شکایت کی جاتی ہے تو وہ خود بھی اپنے ماتحتوں کے لئے کوئی کارروائی نہیں کاپاتے وہ بھی لاچار اورمجبور نظرآتے ہیں ۔شہری عوام سے محمداعظم خاں شہری ترقی وزیر حکومت اترپردیش لکھنؤ نے ۴۲ گھنٹے بجلی فراہم کرنے کا وعدہ کیاتھا اور اس کام کو مکمل کرنے کیلئے ٹرانسفارمر وغیرہ کی سہولیات بھی مہیہ کرادی ہیں تاکہ عوام کو ۴۲ گھنٹے بھرپور مقدار میں بجلی فراہم ہوسکے مگر شہر کا بجلی محکمہ وزیر کے احکام کو بھی ہوامیں اڑارہاہے اورایسا کرکے بجلی محکمہ سماجوادی حکومت سے بھی عوام کو دور کرنے کی کوشش کررہاہے ۔ ایسے حالات میں خاص طورسے پہاڑی گیٹ کے جونیئر انجینئر اور ڈونگر پور کے جونیئر انجینئر جو کہ شہری باشندوں کو ۴۲ گھنٹے بجلی فراہم کرانے میں سراسر ناکام ہیں اور جس سے صاف ظاہر ہوتاہے کہ محمداعظم خاں کاخوف ان افسران کے دلوں سے نکل چکاہے ۔ ایسے بھی افسران کی غیرجانبدار جانچ کر عوامی مفاد میں شہر سے ان کا تبادلہ کردیا جائے تاکہ شہری عوام کو حکومت کے حکم کے بموجب ۲۴ گھنٹے بجلی میسر ہوسکے ۔



قتل کے معاملے میں پانچ افراد کو عمر قید کی سزا

بلیا۔24جنوری (فکروخبر/ذرائع) اتر پردیش میں بلیا علاقے کے سات سال پرانے قتل کے معاملے میں پانچ مجرموں کو عمر قید کی سزا اور پانچ پانچ ہزار روپے کاجرمانہ عائد کیا ہے ۔ استغاثہ کے مطابق ریوتی علاقے کے شیوال مٹھیا گاؤں میں ۳۰جولائی۲۰۰۸کی صبح گھر سے دوکان جارہے ۰۴سالہ بھرتھری اور اس کے چاچا سدرشن کو پرانی رنجش کی وجہ سے گولی مار دی تھی ۔اس واقعہ میں بھرتھری کی موت ہو گئی تھی اور سدرشن شدید زخمی ہو گیا تھا۔اس معاملے کی سماعت کے بعد کل شام ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ وینود کمار نے قتل کی سازش مین ملوث پانچوں ملزمین کومجرم قرار دیتے ہوئے عمر قید کی سزا سنائی اور پانچ پانچ ہزار کا جرمانہ بھی عائد کیا۔


مرادآباد میں کڑاکے کی سردی

مرادآباد۔24جنوری (فکروخبر/ذرائع)مغربی اترپردیش کے مرادآباد اور گردونواح کے علاقوں میں برفیلی ہوائیں چلنے کی وجہ سے کڑاکے کی سردی ہوگئی ہے۔صبح و شام گھنے کہرے اور پہاڑوں پر ہوئی برفباری کی وجہ سے سرد ہوائیں چلنے سے کڑاکے کی سردی ہونے پر لوگ اپنے گھروں میں دبک کر بیٹھنے کے لئے مجبور ہوگئے ہیں۔کہرے اور سردی کی وجہ سے یہاں سڑک اور ریل ٹرانسپورٹ بھی بری طرح متاثر ہے۔ مرادآباد جنکشن ریلوے اسٹیشن سے گزرنے والی لمبی مسافت والی زیادہ تر ٹرینیں آج بھی اپنے مقررہ وقت سے کئی کئی گھنٹوں تاخیر سے چل رہی ہیں۔محکمہ موسمیات کے ذرائع کے مطابق گزشتہ 24 گھنٹوں میں مرادآباد میں دن کا زیادہ سے زیادہ درجہ حرارت 11.8 ڈگری سیلسیس ریکارڈکیا گیا جو معمول سے 10 ڈگری سیلسیس کم تھا جبکہ کم از کم درجہ حرارت 6.7 ڈگری سیلسیس درج کیا گیاہے۔



مارپیٹ کے معاملے میں دواساتذہ لیڈروں کے خلاف مقدمہ قائم 

گورکھپور۔24جنوری (فکروخبر/ذرائع) بی ٹی سی میں مارپیٹ کے معاملے میں دو ٹیچر لیڈران پر مقدمہ درج کرایاجانے کی مخالفت میں اساتذہ متحرک ہوگئے اساتذہ کو کرپش کی سیڈی کا سہارا ملا ہے ۔ پرائمری اور سکنڈری اسکولوں کے اساتذہ نے بی ایس اے دفتر پر مظاہرہ کیا جلوس نکال کر کمشنر ڈی ایم اور ایس ایس پی سے ملے افسران کو میمورنڈم اور سی ڈی دیکر بدعنوانی میں ملوث بابوؤں کی جانچ کراکر کارروائی کرنے کا مطالبہ کیا گیا ۔اساتذہ لیڈر تارکیشور شاہی نے بتایا کہ کمشنر ڈی ایم اور ایس ایس پی کو دی گئی سی ڈی میں بی ایس اے دفتر میں نمبروں کی تجدید کو لیکر روپئے کامطالبہ کرتے بابوؤں کی ویڈیو لی گئی ہے ۔وی ڈی او کلپ میں جن بابوؤں نے فرضی مقدمہ درج کرایا ہے اور ان کے ساتھ منسلک بابو ایک ہزار سے دوہزار روپئے کا مطالبہ کررہے ہیں ۔اترپردیش وشسٹ بی ٹی سی ویلفیئر ایسوسی ایشن کے ریاستی نائب صدر سدن شرما کی رہنمائی میں کافی تعداد میں بی ایس اے دفترپر پہنچے اساتذہ نے مظاہرہ کیااور بی ایس او کو میمورنڈم دیا اس کے بعد جلوس نکالتے ہوئے کمشنر ڈی ایم اور ایس ایس پی کو بھی میمورنڈم اورسی ڈی دیکر جانچ کرانے کی گزارش کی ۔ 



نوجوان کانگریسوں نے استعفیٰ کامطالبہ کرتے ہوئے اسمرتی ایرانی کا کیاپتلا نذرآتش 

فتحپور۔24جنوری (فکروخبر/ذرائع)حیدرآباد یونیورسٹی میں دلت طالب علم روہت کی خود کشی کو لیکر ضلع یوتھ کانگریس کمیٹی نے بی جے پی حکومت کو دلت مخالف بتاتے ہوئے مرکزی کی فروغ انسانی وسائل وزیر اسمرتی ایرانی کے پتلے کو نذرآتش کر استعفیٰ کا مطالبہ کیا ۔ جمعہ کو ضلع یوتھ کانگریس کمیٹی کے ضلع صدر راجن تیواری کی رہنمائی میں ہریہر گنج کراسنگ پر مرکزی حکومت کی فروغ انسانی وسائل وزیر اسمرتی ایرانی کا پتلا نذرآتش کر مرکزی حکومت کے خلاف نعرے بازی کی ۔ ضلع صدر راجن تیواری نے کہا کہ حیدرآباد یونیورسٹی کے وحید دلت طالب علم روہت کی موت کی ذمہ دار بی جے پی کی دلت مخالف کی فکر ہے اس کے لئے اسمرتی ایرانی برائے راست ذمہ دارہیں ۔ ضلع کانگریس کمیٹی کے جنرل سکریٹری انوراگ نارائن نے کہا کہ اسمرتی ایرانی اپنی قابلیت اور نااہلی کی وجہ سے راج دھرم نبھانہیں پائیں جس کی وجہ سے ذہین طالب علم روہت نے خود کشی کرنے پر مجبور ہوناپڑا ان کو اس کے لئے اخلاقی ذمہ داری لیتے ہوئے وزارت سے فوراً استعفیٰ دے دینا چاہئے ۔ یوتھ ضلع صدر راجن تیواری نے کہا کہ بی جے پی حکومت طلباء کسان اورمذدور کی مخالف ہے ساتھ ہی انہوں نے یہ بھی بتایا کہ ۳۲ کو یوتھ کانگریس کا جتھا راہل گاندھی کسانوں کو لیکر بندیل کھنڈ کے مہوبامیں ہونے والی پیدل مارچ میں شامل ہوگا۔ اس موقع پر منوج گھایل ،امت مشرا ، انوراگ مشرا ، ونے دکشت، اجے کمار، نرمل بابا، منی دبے ، آشیش شریواستو، سورج ارون ، جسونت نریندرکمار،نارن شکلا، روہت پنڈت وغیرہ موجود رہے ۔

Urdu-Arabic-Keybaord11

ISLAMIC-MESSAGES